.

والدین کا ملازمت کے لیے باہر رہنا بچوں میں موٹاپے کی وجہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

صحت سے متعلق ایک جدید مطالعے میں یہ بات سامنے آئی ہے کہ باپ اور ماں دونوں کی گھر سے باہر ملازمت بچوں میں موٹاپے کی بیماری کا سبب بنتی ہے۔ والدین کا طویل اوقات کے لیے گھر سے غائب رہنا اس کا نتیجہ بچوں میں خطرناک موٹاپے کی صورت میں سامنے آتا ہے۔ ادھر دنیا کے بہت سے ممالک میں حکام بچوں میں موٹاپے کے مسائل کو حل کرنے اور اس سے پیدا ہونے والے امراض کے علاج کے لیے بھاری رقوم خرچ کر رہے ہیں۔

ڈنمارک کے محققین کے مطابق جن بچوں کے باپ اور مائیں گھر سے باہر ملازمت میں مصروف ہوتے ہیں وہ نیند کی کمی ، سستی اور ورزش کی کمی کے علاوہ گھر میں بنے ہوئے صحت بخش کھانوں کی عدم دستیابی کے مسائل سے دوچار رہتے ہیں۔ یہ تمام تر عوامل ان بچوں میں موٹاپے کے اضافے کا سبب بنتے ہیں۔

برطانوی اخبار "ڈیلی مرر" نے کوپن ہیگن میں ڈاکٹر ونكی جوزڈز کے حوالے سے بتایا ہے کہ والدین کی گھر سے باہر ملازمت کا بچوں میں موٹاپے کے ساتھ تعلق دنیا کے بہت سے ممالک میں سامنے آیا ہے جن میں امریکا اور برطانیہ شامل ہیں۔ یہ تعلق 5 سے 10 برس کے درمیان عمر کے بچوں میں زیادہ مضبوط اور گہرا ہوتا ہے۔ اس لیے کہ ماں باپ کے گھر میں نہ ہونے کی صورت میں وہ اس حوالے سے زیادہ مختار ہوتے ہیں کہ کیا کھائیں اور کیا چھوڑ دیں۔

ڈاکٹر جوزڈز کے مطابق "گھر سے باہر تیار ہونے والے کھانے بچوں میں موٹاپا پیدا کرنے کا بڑا سبب ہیں۔ اس لیے کہ ان کھانوں میں چکنائی ، شکر اور نمک کی زیادہ مقدار پائی جاتی ہے"۔ اس کے علاوہ جن بچوں کی مائیں طویل وقت کے لیے گھر سے باہر رہتی ہیں وہ عموما بیٹھے رہنے اور کم حرکت کرنے والی سرگرمیوں کو اپناتے ہیں۔ ایسے بچے اپنے ساتھیوں کے مقابلے میں ہفتے میں 1.5 گھنٹہ کم سوتے ہیں۔

دنیا بھر کے بہت سے ممالک بالخصوص خلیجی ممالک میں بچے موٹاپے کا شکار ہیں جو اکثر اوقات بیماری کی حد تک پہنچ جاتا ہے۔ "ڈیلی مرر" کے مطابق برطانیہ میں تین سال کی عمر کے 25 % سے زیادہ بچے وزن کی زیادتی کا شکار ہیں۔ جہاں تک اسکول میں داخلے کی عمر (پانچ سال) کے بچوں کا تعلق ہے تو ان میں ہر پانچ میں سے ایک بچہ وزن کی زیادتی کے مسئلے سے دوچار ہے۔

موٹاپا متعدد بیماریوں کے اسباب میں سے ایک سبب شمار کیا جاتا ہے۔ ان میں ذیابیطس ، بلند فشار خون ، امراض قلب اور شریانوں کی بندش شامل ہے۔ ڈاکٹروں کے مطابق موٹاپے کی وجہ سے بچوں میں بعض نفسیاتی مسائل بھی پیدا ہوجاتے ہیں۔