.

اس عورت نے اپنے جلے زخموں کو مچھلی کی جلد سے کیوں ڈھانپا؟

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

برازیلی ڈاکٹروں نے لا علاج حد تک جلنے والی جلد اور زخموں کے علاج کی ایک نئی تکنیک دریافت کی ہے جس میں برازیلی دریاؤں میں پائی جانے والی تلاپیا مچھلی کی چھال استعمال کی جا رہی ہے۔


مقامی ڈاکٹروں نے اس سال اکتوبر کے اوائل سے جلنے والے پچاس مریضوں کا تلاپیا مچھلی کی جلد کو جلنے والے زخموں پر اپلائی کر کے علاج کا تجربہ کیا جس کے بہت ہی خوش آئند نتائج نکلے۔


زیر نظر خبر کے ساتھ شائع تصویر 36 سالہ خاتون ماریا انیس دا سیلفا کی ہے جسے برازیلی اخبارات سمیت عالمی میڈیا نے نمایاں طور پر شائع کیا۔ ماریا کے جلنے سے پیدا ہونے والے لاعلاج زخموں کا علاج تلاپیا مچھلی کی جلد مرہم کے طور پر استعمال کرتے ہوئے کیا گیا۔


برازیلی خاتون ماریا کو باورچی خانے میں کھانے کی تیاری کے دوران جلنے سے انتہائی گہرے زخم آئے جس سے اس کے بازو اور پیر بری طرح متاثر ہوئے۔ نیز اس کا سینہ، چہرہ اور گردن بھی بری طرح جھلس گیا تھا۔ اس کے جسم کے جلے ہوئے ٹشوز پر کوئی بھی مرہم کارگر ثابت نہیں ہو رہا تھا، جس نے ماریا کی اپنے علاج کے سلسلے میں امیدیں دم توڑنے لگیں۔


انہوں نے آخری حربے کے طور پر انتہائی جلے ہوئے ٹشوز کے علاج کی خاطر تلاپیا مچھلی کی چھال کو بطور مرہم استعمال کرنے پر رضا مندی ظاہر کی۔ مخصوص مچھلی کی چھال کو بطور مرہم استعمال کرنے سے متعلق اپنا تجربہ بیان کرتے ہوئے ماریا نے بتایا کہ میں مایوس ہو چکی تھی کیونکہ کوئی بھی دوا میرے جلے زخموں کے علاج میں کارگر ثابت نہیں ہو رہی تھی۔ جلے ہوئے زخموں اور جلد کے فوری علاج کی خاطر میں اس قسم کے طریقہ علاج کا مشورہ دوں گی۔"


ماریا کے جلے ہوئے زخموں کا علاج کرنے کی غرض سے ڈاکٹروں نے 11 دن تک تلاپیا مچھلی کی چھال اس کے زخموں پر بطور مرہم لگائی، اس کے جسم کے زیادہ جلے ہوئے حصوں پر مزید مرہم پٹی کی جاتی رہی۔


اس خصوصی طریقہ علاج کی نگرانی مشرقی برازیل کے جوز فروٹا انسٹی ٹیوٹ میں ماہرین کی ایک ٹیم نے کی۔ ڈاکٹروں کے مطابق مچھلی کی جلد کو جلے ہوئے زخموں پر بطور مرہم لگانے سے قبل اچھی طرح صاف کیا جاتا ہے تاکہ اس پر لگے ہوئے مضر مادے مریض کو نقصان نہ پہنچائیں۔ نیز مچھلی کی مخصوص ناگوار بو کو بھی دور کرنے کا خصوصی اہتمام کیا جاتا ہے۔

مچھلی کی جلد کو دس سے بیس سینٹی میٹر لمبی پٹیوں کی صورت میں برازیل کے شہر ساؤ پالو کے فریزر بینک میں رکھا جاتا ہے جسے محفوظ رکھنے کے بعد دو سال تک استعمال کیا جا سکتا ہے۔


مچھلی کی جلد میں انتہائی درجے کی نرمی اور زخموں کو مندمل کرنے کی صلاحیت ہوتی ہے۔ یہ مچھلی بیماریوں کے خلاف مؤثر مزاحم ہوتی ہے۔ اس میں کلوجین سمیت لحمیات کی بڑی مقدار ہوتی ہے۔ نیز مچھلی کی جلد رطوبت کو تادیر محفوظ کر سکتی ہے۔