.

معجزہ: 92 سالہ فلسطینی کے ہاں اولاد کی نعمت

بچی کی پیدائش قدرت کاملہ کی دلیل اور ہمارے لیے سرپرائز ہے: والدین

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

فلسطین میں ایک معمر شہری کے ہاں بچی کی پیدائش نے عام لوگوں ہی کو نہیں بلکہ طبی ماہرین کو بھی ورطہ حیرت میں ڈال دیا ہے کیونکہ بچی کے والد کی عمر 92 سال اور والدہ کی 42 سال سے زیادہ ہو چکی ہے۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق نو مولودہ کے والد 92 سالہ الحاج محمود العدم کا تعلق مقبوضہ مغری کنارے کے جنوبی شہر الخلیل کے بیت اولا قصبے سے ہے۔ انہوں نے بچی کا نام ’تمارا‘ رکھا اور کہا ہے کہ وہ قدرت کے اس عظیم تحفے پر خود بھی حیران ہیں۔ الحاج محمود العدم نے بتایا کہ ان کے پہلے بھی آٹھ بیٹیاں اور پانچ بیٹے ہیں۔ اللہ نے ان میں ایک اور بچی کا اس وقت اضافہ کیا جب انہیں اس کی کوئی امید نہیں تھی۔ یہ اللہ کی مشیت، قدرت کاملہ کی دلیل اور ہمارے لیے سرپرائز ہے۔

تمارا کی ماں عبیر العدم کی عمر 42 سال ہے۔ ان کا کہنا ہے کہ میرے پہلے شوہر فوت ہو گئے تو میں نے الحاج العدم سے رشتہ ازدواج میں منسلک ہو گئی تھی۔ میرے شوہر کی پیرانہ سالی اور میری ڈھلتی عمر میں اولاد کی توقع بالکل نہیں تھی۔

ماہرین صحت کا کہنا ہے کہ ڈھلتی عمر کے ساتھ مردوں میں بچوں کی پیدائش کی صلاحیت کم سے کم تر ہوتی جاتی ہے۔ دائمی امراض مثلا فشار خون کی کمی بیشی، شوگر اور بڑھاپے کے امراض تولیدی جراثیم کو بری طرح متاثر کرتے ہیں۔ مردوں میں بچے پیدا کرنے کے جراثیم اچھی صحت سے مشروط ہیں مگر بڑھاپے میں اچھی خوراک بھی بچے پیدا کرنے میں معاون نہیں ہو سکتی۔