.

ہوائی جہاز میں تنہا سفر کرنے والے سعودی شہری کے سفر کا واقعہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

فضائی سفر کے نادر روزگار واقعات میں سعودی عرب میں پیش آنے والے اس واقعے کو بھی یاد رکھا جائے گا جس میں ایک سے دوسرے شہر کی پرواز میں پورے ہوائی جہاز میں صرف ایک شہری نے سفر کیا۔

ہوائی جہاز میں اکلوتے سفر کرنے والے سعودی شہری جہاد المریح نے العربیہ ڈاٹ نیٹ سے بات کرتے ہوئے کہا کہ اسے 6 مارچ 2017ء کو رفحاء شہر سے حائل جانا تھا۔ ہوائی جہاز کے لیے اس کی نشست پہلے ہی محفوظ کی جا چکی تھی۔ ہوائی جہاز کی پرواز کا وقت دن 12:55 بتایا گیا تھا مگر وہ کوئی ایک گھنٹہ قبل یعنی 11:50 پر رفحاء شہر کے ہوائی اڈے پر پہنچ گیا جہاں اگلے ایک گھنٹے میں اس کے سفر کے دیگر انتظامات ہونا تھے۔

المریح نے بتایا کہ چند منٹ گذرنے کے بعد ہوائی جہاز کے عملے کے ایک شخص نے میرا نام پکارا جس پر وہ فوری طور پر اٹھ کر جہاز کی طرف گیا جہاں عملے کے ایک اہلکار نے اسے بتایا اگر وہ آٹھ منٹ مزید تاخیر سے پہنچتا وہ پرواز منسوخ ہوجاتی۔

مریح نے بتایا کہ اس کے سامان کا بیگ ٹرمینل سے جہاز میں لادنے کے لیے نہیں لےجایا گیا اور میں اسے اپنے ساتھ اٹھائے ہوائی اڈے میں داخل ہوگیا تھا۔ میں نے کچھ انتظار کیا۔ ایک ہوائی جہاز الریاض کی طرف روانہ ہوا۔

ہوائی اڈے کے ایک اہلکار نے اعلان کرنے کے بجائے مجھے بس کی طرف جانے کو کہا۔ وہ بس میں سوار ہوا اور بس کے دروازے بند کردیے گئے۔ وہ بس میں بھی تنہا تھا۔ ویگن کے ہوائی جہاز کے پاس پہنچنے کے بعد لگا کہ یہاں اور کوئی مسافر موجود نہیں۔ میں جہاز میں سوار ہوگیا اور جہاز اپنے مقررہ وقت سے 20 منٹ پہلے ہی ٹیک آف کرگیا۔

محمد المریح کاکہنا ہے کہ پہلے تو وہ حیران تھا کہ پوری پرواز میں صرف میں ہی اکلوتا مسافر ہوں۔ ہوائی جہاز کے ٹیک آف کے بعد مسافروں کی ہدایت کے لیے کوئی اعلان تک نہیں کیا گیا تاہم ہوائی جہاز کے میزبان عملے نے میری خوب خاطر مدارت کی۔

المریح نے ہوائی جہاز کے اندر کی تصاویر بھی سوشل میڈیا پر پوسٹ کی ہیں اور بتایا ہے کہ وہ اس نے طیارے میں تنہا سفر کیا جہاں اور کوئی مسافر موجود نہیں تھا۔

ایک سوال کے جواب میں محمد المریح نے کہا کہ اس نے دوران سفر عملے سے کہا کہ وہ پائلٹ کے ساتھ سیلفی بنانے کا خواہاں ہے۔ عملے نے میرے لیے کاک پٹ بھی کھول دیا۔ وہاں نے سفر کا نقشہ بھی دیکھا۔ دوران پرواز اس نے بعض مقامات کی فضائی تصاویر بھی بنائیں۔

حائل ہوائی اڈے پر پہنچنے کے بعد جب وہاں کے عملے کو پتا چلا کہ ہوائی جہاز صرف ایک مسافرکو لے کر یہاں پہنچا ہے تو وہ سب اس پر حیران تھے کہ بھلا ہوائی جہاز صرف ایک مسافر کے لیے کیسے پرواز کر سکتا ہے۔