.

شفیق استاد کو خراجِ عقیدت پیش کرنے کے لیے طلبہ کی طویل قطار

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

اپنے پسندیدہ اور شفیق استاد کے ادارے سے چلے جانے یا دنیا سے رخصت ہونے پر طلبہ کو دکھ ضرور پہنچتا ہے مگر مصرمیں ایک شفیق استاد کی وفات کے بعد انھیں خراجِ عقیدت پیش کرنے کے لیے اسکول کے طلبہ اور طالبات نے منفرد انداز اختیار کیا اور ایک کلومیٹر طویل قطار بنائی ہے۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق استاد کی منفرد تکریم کا یہ مظاہرہ الشرقیہ گورنری کے شنبارۃ المیمونہ اسکول کے طلبہ اور طالبات نے کیا ہے۔ جب مرحوم استاد عطیہ عبداللطیف ہاشم کی میت کو تدفین کے لیے لے جایا جانے لگا تو سڑک کے دونوں اطراف طلبہ نے ایک کلومیٹر طویل قطار بنائی اور انھیں بھرپور خراجِ عقیدت پیش کیا۔ شاگردوں اور دوسرے طلبہ کی جانب سے اپنے استاد کی تکریم کا یہ مظاہرہ مقامی لوگوں کے لیے بھی حیران کن تھا۔ لوگوں نے اسے بہت پسند کیا اور طلبہ اور اس اسکول انتظامیہ کی تعریف کی ہے۔

اس موقع پر طلبہ کا کہنا تھا کہ ان کے مرحوم استاد عبداللطیف ہاشم نے دوران تدریس اپنی محبت، عطاء اور علم سکھانے میں ذرہ برابر بھی کسی قسم کے بخل کا مظاہرہ نہیں کیا۔ طلبہ بھی شفیق اور باصلاحیت استاد سے بہت محبت کرتے تھے۔ ان کی اچانک وفات کی خبر نے اسکول کے تمام طلبہ کو دکھی اور افسردہ کردیا ہے۔

مرحوم مصری معلم کے ساتھی اساتذہ کا کہنا ہے کہ ہاشم ریاضی پڑھاتے تھے۔ وہ اپنے شاگردوں سے اپنی اولاد کی طرح محبت کرتے تھے۔ وہ بچوں کی پڑھائی کے معاملے میں ان کے گھروں تک جاتے، والدین سے ملتے اور انھیں بچوں کے روز مرہ تدریسی امور کے حوالے سے مطمئن کرتے تھے۔

مصری طلبہ نے اپنے شفیق استاد کی خدمات کو سراہتے ہوئے کہا ہے کہ وہ ایک محبت کرنے والے روحانی باپ سے محروم ہوگئے ہیں۔