ادلب میں خودکش حملہ، بشار الاسد مخالف دسیوں باغی ہلاک

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size

شام کے باغی ذرائع نے بتایا ہے کہ ملک کے جنوب مغرب میں ان کے زیر نگین ادلب شہر میں ایک نامعلوم خودکش بمبار نے بارود سے بھری گاڑی باغیوں کے ایک اجتماع سے ٹکرا دی جس کے نتیجے میں متعدد افراد ہلاک و زخمی ہونے کی اطلاعات ہیں۔

باغی ذرائع کے بقول خودکش بمبار کے ذریعے کئے جانے والے دھماکے سے ایک ٹیکسٹائل فیکٹری تباہ ہوئی جسے حیاہ تحریر الشام نامی باغی گروپ اپنے مرکزی دفتر کے طور پر استعمال کر رہا تھا۔ یاد رہے کہ حیات تحریر الشام نامی تنظیم کا تعلق القاعدہ سے رہا ہے جو بعد میان نصرہ فرنٹ میں ضم ہو گیا تھا۔ بدھ کے روز ہونے والے دھماکے میں 12 باغیوں کی ہلاکت کی ابتک تصدیق ہو چکی ہے۔

حکومت مخالف باغیوں کا یہ اتحاد گزشتہ چند دنوں سے ادلب شہر میں داعش کے انتہا پسند خفیہ دستوں کی بیخ کنی کے لئے آپریشن میں مصروف تھا ، جس میں گروپ کے بقول ایک سو جنگجو وں کو گرفتار کیا جا چکا ہے۔ گرفتار کئے جانے والوں میں ایسے سینئرجنگجو بھی بتائے جاتے ہیں کہ جن کا ہاتھ ادلب صوبے میں کی جانے والی قتل کی متعدد کارروائیوں میں بتایا جاتا ہے۔

ادلب شہر کے زیادہ حصے پر عسکریت پسند جنگجووں کا قبضہ ہے اگرچہ شہر کے کچھ حصے میں مغرب نواز اعتدال پسند فری سیرئین آرمی کے بھی دستے دکھائی دیتے ہیں۔

ترکی کی سرحد سے متصل اس صوبے میں کنڑول کے خواہش مند عسکری پسند گروپوں کے درمیان ایک عرصے سے لڑائی جاری ہے۔

اگرچہ بشار الاسد کے مخالف باغیوں کے درمیان نظریاتی اختلاف کی خلیج کافی گہری ہے جس کی وجہ سے ان کے درمیان ہلاکت خیز تصادم ہوتا رہتا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں