.

جھینگروں کے پاؤڈر سے تیار روٹی کا ذائقہ کیسا ہے ؟

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

فِن لینڈ میں ایک بیکری نے غیر معمولی مصنوعات کے ضمن میں جمعرات کے روز ایک انوکھی چیز پیش کی ہے۔ اسے دنیا کی پہلی روٹی قرار دیا گیا ہے جس کی تیاری میں کیڑوں کا استعمال کیا گیا۔

مذکورہ روٹی خشک جھینگروں کے پاوڈر ، آٹے اور بیجوں پر مشتمل ہے اور یہ عام روٹی سے زیادہ پروٹین رکھتی ہے۔ اس ایک روٹی میں تقریبا 70 جھینگر استعمال ہوتے ہیں اور یہ 3.99 يورو (4.72 ڈالر) تک میں فروخت ہو رہی ہے جب کہ عام روٹی کی قیمت دو سے تین یورو ہے۔

متعدد مغربی ممالک میں کیڑے مکوڑوں کو پروٹین کے ذریعے کے طور پر توجہ حاصل ہو رہی ہے۔

رواں ماہ نومبر میں فِن لینڈا اُن دیگر پانچ یورپی ممالک (برطانیہ ، ہالینڈ ، بیلجیئم ، آسٹریا اور ڈنمارک) کی فہرست میں شامل ہو گیا جہاں کیڑوں کو غذا میں استعمال کرنے کے لیے تربیت کی اجازت دی گئی۔

ہِلسینکی سے تعلق رکھنے والی ایک طالبہ سارہ نے نئی روٹی کو کھانے کے بعد بتایا کہ "مجھے کوئی فرق محسوس نہیں ہوا.. اس کا ذائقہ عام روٹی جیسا ہے"۔

کیڑوں کو کھانے کا رواج دنیا بھر میں کئی ممالک میں پھیلا ہوا ہے۔ اقوام متحدہ نے گزشتہ برس ایک اندازے میں بتایا تھا کہ دنیا میں کم از کم دو ارب افراد کیڑوں کو کھاتے ہیں اور کیڑوں کی کم از کم 1900 اقسام کھانے میں استعمال ہوتی ہیں۔