.

دبئی کی شاہراہوں پر سگریٹ کے ٹوٹے مت پھینکیں ، ورنہ 500 درہم جرمانہ ہوگا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

دبئی حالیہ برسوں کے دوران میں دنیا کے بڑے کاروباری مراکز میں سے ایک کے طور پر ابھرا ہے ۔دبئی کی اس ترقی کا راز اس کی انتظامیہ کے صفائی ستھرائی سے لے کر ترقیاتی اقدامات تک میں اعلیٰ معیارات کی پاس داری میں پنہاں ہے۔

دنیا بھر میں شہریوں کی یہ عادت ہے کہ وہ شاہراہوں ، پارکوں اور عام گذرگاہوں میں سگریٹ کے ٹوٹے ، کچرا اور استعمال شدہ اشیاء کی باقیات ادھر ادھر پھینک دیتےہیں۔ بیشتر شہروں میں تو اس بد تہذیبی پر مرتکبین پر بھاری جرمانے عاید کیے جاتے ہیں لیکن پاکستان ایسے ممالک کے شہروں میں ایسا کچھ نہیں ہوتا اور شہری جا بہ جا غلاظت پھیلاتے نظر آتے ہیں ۔

ان ممالک سے تعلق رکھنے والے تارکینِ وطن اپنی اس عادت کا دبئی ایسے ترقی یافتہ شہر میں بھی عملی مظاہرہ کرتے نظر آتے ہیں اور اس معاملے میں مقامی شہری بھی ان سے کسی طرح پیچھے نہیں ہیں لیکن ’بکرے کی ماں کب تک خیر منائے گی ‘کے مصداق اب دبئی کی بلدیہ نے گندگی پھیلانے اور سگریٹ کے ٹوٹے پھینکنے والے افراد پر بھاری جرمانہ عاید کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔

دبئی کی بلدیہ نے شہر کو صاف ستھرا رکھنے کے لیے سگریٹ نوشوں کو خبردار کرنے کی غرض سے ایک مہم شروع کی ہے اور انھیں یہ خبردار کیا جارہا ہے کہ وہ سگریٹ کے بچے ہوئے ٹوٹے شاہراہوں پر یا گلیوں ، بازاروں میں پھینکنے سے گریز کریں۔

اب اگر سگریٹ نوش بچے ہوئے ٹوٹے مخصوص جگہوں اور گندگی والے ڈبوں میں نہیں ڈالیں گے اور انھیں عام راستوں اور گاڑی چلاتے ہوئے شاہراہوں پر پھینکیں گے توان پر 500 درہم جرمانہ عاید کیا جائے گا۔

اگر ایسے سگریٹ نوشوں کو پارکوں ، کاروباری مراکز اور شاہراہوں پر سگریٹ کے ٹوٹے پھینکتے ہوئے بلدیہ کے انسپکٹروں نے پکڑ لیا تو پھر ان پر دُگنا جرمانہ عاید کیا جائے گا۔ اگر وہ دوبارہ خلاف ورزی کے مرتکب ہوتے ہیں تو جرمانہ تین گنا ہوگا۔

اس وقت دبئی میونسپلٹی کے شعبہ ویسٹ مینجمنٹ میں 154 انسپکٹر کام کررہے ہیں اور وہ کچرا پھینکنے والوں پر موقع پر ہی جرمانہ عاید کرنے کے مجاز ہیں۔ یاد رہے کہ 2016ء میں دبئی میں عوامی مقامات پر کچرا اور سگریٹ کے بچے ہوئے ٹوٹے پھینکنے پر 2939 جرمانے عاید کیے گئے تھے۔

دبئی میں عوامی مقامات پر تھوک اور بلغم پھینکنے پر بھی پانچ سو درہم کیا جاتا ہے۔ بلدیہ کے شعبہ ویسٹ مینجمنٹ کے ڈائریکٹر عبدالمجید سیفی کا کہنا ہے کہ ’’ اس مہم میں سگریٹ اور کاغذ کے ٹکڑے پھینکنے والے لوگوں کو خبردار کیا جارہا ہے اور خلاف ورزی کے مرتکبین پر جرمانے عاید کیے جارہے ہیں، ہم سڑکوں اور راستوں پر تھوک پھینکنے سمیت لوگوں کی دوسری غیر صحت مندانہ عادات کی روک تھام کی بھی کوشش کررہے ہیں‘‘۔