سعودی عرب میں چونے کے پتھر سے سو سال قبل تعمیر ہونے والا تاریخی قلعہ، آپ بھی دیکھیں!

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size

سعودی عرب کے شمالی علاقے الجوف کے قریات شہر میں‌ آج سے ٹھیک ایک سو سال قبل 1919ء میں سفید رنگ کے چونے کے پتھر سے ایک قلعہ تعمیر کیا گیا۔ یہ قلعہ اپنے فن تعمیر، خوبصورتی اور مضبوطی کے معیار میں اپنی مثال آپ ہے۔

قلعہ 'کاف' کے نام سے مشہور یہ قلعہ جنگوں کے دوران الجوف کے علاقے کے دفاع کے لیے تعمیر کیا گیا تھا مگر اب یہ سعودی عرب کی ایک تاریخی یادگار کا درجہ حاصل کر چکا ہے۔

سعودی محکمہ سیاحت اور آثار قدیمہ کے مطابق قلعے کا اندرونی احاطہ 2700 مربع میٹر پر پھیلا ہوا ہے جس میں ایک محل ہے۔ قعلے کے چاروں کناروں پر چار برج تعمیر کیے گئے ہیں۔

شاہ عبدالعزیز سٹی ریسرچ سینٹر کے مطابق سنہ 1343ھ میں یہ قلعہ شاہ عبدالعزیز کے حوالے کیا گیا اور اسے قریات شہر کے انتظامی ہیڈ کوارٹر کا درجہ حاصل ہے۔

قلعہ 'کاف' کی تعمیر دو سال میں مکمل ہوئی۔ حجاز میں سعودی مملکت کے قیام کے بعد یہ قلعہ قریات کا انتظامی ہیڈ کوارٹر اور گورنر ہائوس رہا۔ بعد میں بھی اس کی مرمت کا کام جاری رہا۔

علی بن بطاح اس قلعے میں رہنے والے پہلے امیر علاقہ تھے۔ انہوں‌ نے 1344ھ میں اس قلعے کو اپنا پایہ تخت بنایا۔ اس کے بعد عبداللہ بن حمدان، عبداللہ الحواس، صالح بن عبدالواحد،عبدالعزیز بن زید اورعبدالعزیزالسدیری نے اسے گورنرہائوس کے طور پر استعمال کیا۔ سنہ 1357ھ میں انتظامی ہیڈ کوارٹر موجودہ مقام پر منتقل کیا گیا۔ قلعے میں موجود محل قلعے کے اندر واقع ٹیلے کے وسط میں واقع ہے۔ اس کے شمال مشرق کی سمت میں کاف گائوں واقع ہے۔ قلعے کے دو مرکزی داخلی دروازے ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں