انتخابی بخار میں مبتلا مودی کی’’ درفنطنی’’ سے سوشل میڈیا پر نیا طوفان

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

پاکستان اور بھارت کے سیاستدان سیاسی، سماجی اور سائنسی موضوعات سے ’’لاعلمی‘‘ یا جوش خطابت میں اکثر اوقات ایسی ’’مضکحہ خیز موشگافیاں‘‘ کر جاتے ہیں، جس کا خمیازہ انھیں ساری عمر بھگتنا پڑتا ہے۔

اس ضمن میں نیا اضافہ بھارتی وزیر اعظم نریندر مودی کا حالیہ انٹرویو ہے جس میں انہوں نے دعویٰ کیا تھا کہ انھوں نے فروری میں اس لیے پاکستان میں فضائی حملوں کا حکم دیا تھا کیونکہ بادلوں کے باعث پاکستانی ریڈار بھارتی جہازوں کی آمد کے بارے میں جان نہیں پائیں گے۔

اس بیان کا سوشل میڈیا پر مذاق اڑایا جا رہا ہے۔بھارتی وزیر اعظم اس جنوبی ایشیائی ملک میں جاری انتخابات میں کامیابی حاصل کرکے دوسری مرتبہ وزیر اعظم بننے کے لیے پر عزم ہیں۔

مودی اپنے انتخابی عمل میں پاکستان میں فضائی حملوں کو بھر پور انداز میں استعمال کر رہے ہیں۔ تاہم ان کے اس حالیہ بیان کو شدید تنقید کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے۔ بی جے پی کی سیاسی حریف جماعت کانگریس کے رکن سلمان سوز نے کہا،’’ اگر مودی درست ہیں تو یہ تو قومی سکیورٹی کا سنگین مسئلہ ہے، یہ کوئی مذاق نہیں ہے۔‘‘

ٹویٹر صارفین مودی کے اس بیان پر بھی ہنس رہے ہیں جس میں ان کا کہنا تھا کہ انیس سو اسی کی دہائی میں انھوں نے ڈیجیٹل کیمرے کا استعمال کیا جب بہت ہی کم لوگوں کے پاس ای میل ایڈریس تھے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں