.

حرمین پریذیڈنسی نے 27 ویں شب کے استقبال کے لئے کیا خاص تیاریاں کیں؟ جانئے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

حرمین شریفین کے انتظامی سیکرٹریٹ کی جانب سے ماہ صیام کے آخری عشرے بالخصوص رمضان المبارک کی 27 ویں شب کو عبادت گذاروں، معتمرین اور معتکفین کی سہولت کے لیے 12 ہزار خدام پر مشتمل افرادی قوت فراہم کی گئی۔ خُدام میں مرد اور خواتین رضا کاردونوں شامل ہیں جو 24 گھنٹے اپنے شیڈول کے مطابق فرائض انجام دے رہے ہیں۔

مسجد حرام میں معتکفین اور عمومی نمازیوں کے لیے آب زمزم کے 25 ہزار کولر فراہم کیے گئے جب کہ مسجد نبوی میں 16 ہزار کولر کے ذریعے مکہ سے سیکڑوں میل دور بھی آب زمزم کی فراہمی کو یقینی بنایا گیا ہے۔ مطاف اور مسجد حرام کے بیرونی احاطے کی صفائی کے لیے 4000 افراد پر مشتمل صفائی کا عملہ تعینات کیا گیا ہے۔ مسجد حرام میں معتکفین کے لیے 3500 الماریاں فراہم کی گئی ہیں جب کہ مسجد نبوی میں 16 ہزار قالین بچھائے گیئے ہیں۔

مسجد حرام میں معتکفین اور معتمرین کی رہ نمائی کے لیے 11 گائیڈ سروس فراہم کی گئی ہیں جب کی مسجد حرام کے 74 اضافی دروازے کھولے گئے ہیں۔ اس وقت مسجد حرام کے کل کھلے دروازوں‌ کی تعداد 170ہو گئی ہے۔ مسجد نبوی کے 100 دروازے کھولے گئے ہیں۔ مسجد کےاندر ضروری کاموں کے لیے 250 ملازمین تعینات ہیں۔

سعودی عرب کی سرکاری نیوز ایجنسی 'ایس پی اے' کے مطابق مصاحف بورڈ کی طرف سے مسجد حرام میں قرآن پاک کے 80 ہزار نسخے تقسیم کئےگئے۔ مسجد حرام اور مسجد نبوی میں الیکٹرک اسکرینوں کی مدد سے بھی رہ نمائی فراہم کا اہتمام کیا گیا ہے۔

ستائیس رمضان المبارک کی شب کو نمازیوں‌ کی تعداد کے بڑھ جانے کے پیش نظر حرمین شریفین انتظامی سیکرٹریٹ کی طرف سے خصوصی انتظامات کیے گئے ہیں۔ مسجد حرام میں نمازیوں کی رہنمائی کے لیے 100 انتظامی یونٹ کام کر رہے ہیں۔ مسجد کی گیلریوں اور دروازوں کے قریب 900 مرد وخواتین ملازمین اور رضا کار تعینات کیے گئے ہیں جو دن اور رات میں تین شفٹوں میں ذمہ داریاں انجام دے رہے ہیں۔ ان میں حرمین کی صفائی کا عملہ، قالینوں‌ کی درستی کے لیے متعین افراد، آب زمزم پلانے والے، محکمہ امر بالمعروف اور نہی عن المنکر اور نمازیوں اور معتکفین میں قرآن پاک کے نسخے تقسیم کرنے والے شامل ہیں۔

مسجد حرام میں پانی خشک کرکے لیے کے لیے 5000 آلات نصب ہیں جب کہ بارش کا پانی صاف کرنے کے لیے400 ملازمین الگ سے کام کر رہے ہیں۔ ماہ صیام کے 20 دنوں میں 1472646 افراد نے مسجد حرام میں دعوت وارشاد سے استفادہ کیا۔ ماہ صیام کے ابتدائی ایام میں حرمین کے باہرسے 20 ہزار ٹن کوڑا کرکٹ اٹھایا گیا۔

حرمین شریفین جنرل پریذیڈنسی کے سربراہ عبدالرحمان السدیس اس موقع پر بہتر کارکردگی کا مظاہرہ کرنے والے ملازمین میں انعامات بھی تقسیم کرتے ہیں۔ نیز حرمین شریفین میں نمازیوں کے لئے سحر وافطار کا خصوصی انتظام کیا جاتا ہے۔