.

سال 1969 سے اب تک خلا نوردوں کے زیر استعمال گھڑی؟

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

چاند کی سطح پر پہلے انسان کے قدم رکھنے کو پچاس برس پورے ہونے پر دنیا بھر میں اس کامیاب خلائی سفر کی گولڈن جوبلی منائی جا رہی ہے۔

اس سفر سمیت متعدد خلائی مشنوں کے دوران خلا نوردوں کے ہمراہ لوازمات میں ایک گھڑی ضروری شامل رہی جو انہیں زمین کے اوقات سے آگاہ رکھتی تھی۔

سال 1969 میں چاند پر اترنے والے خلا نوردوں کے ہمراہOmega Speedmaster گھڑی تھی۔ اس وقت یہ گھڑی میکانکی طرز اور روایتی حرکت کی حامل ہوا کرتی تھی۔ گھڑی میں خلائی سفر کی مناسبت سے کوئی ترمیم نہیں کی گئی سوائے یہ کہ اس کا بیرونی پٹہ ربڑ کا لگایا گیا تا کہ وہ خلا نوردوں کے لباس پر باندھی جا سکے۔

خلائی سفر کے پروگرام Apollo کے تمام مشنوں میں خلا نوردوں کے ہمراہSpeedmaster گھڑیاں ہی موجود رہیں۔ بالخصوص جب کہ امریکی خلائی ایجنسی کی تحقیق سے یہ بات سامنے آئی کہ ایل سی ڈی اور لیتھیم بیٹریز سے لیس جدید گھڑیاں خلائی صورت حال کے لیے موزوں نہیں ہیں۔

اس کے بعد سے Speedmaster گھڑیاں ہی خلائی ماحول اور خلا نوردوں کے لیے دستیاب ہیں اگرچہ اس دوران شکل اور اندرونی اجزاء کے حوالے سے ارتقائی تبدیلیاں شامل حال رہیں۔

علاوہ ازیں Tag Heuer گھڑیاں بھی خلائی سفر میں استعمال ہوئی ہیں۔ کرنل جان گلین نے خلائی سفر کے دوران یہ ہی گھڑی پہن رکھی تھی۔

یہ گھڑی اس وقت Smithsonian National Air and Space Museum میں محفوظ ہے۔

سال 1962 میں خلا نورد Scott Carpenter نے زمین کے گرد چکر لگانے کے مشن کے دوران Breitling Navitimer گھڑی پہنی ہوئی تھی۔ اس گھڑی کو خلائی ضروریات کے لحاظ سے مناسب ترامیم کے بعد استعمال کیا گیا۔