سعودی خواتین کے لیے "آئیکون" بن جانے والی تصویر کس کی ہے؟

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

سعودی عرب میں حالیہ عرصے میں خواتین کے حق میں اعلان کردہ فیصلوں کے حوالے سے ایک مقامی نوجوان خاتون منیرہ عبداللہ خود پر قابو نہ رکھ سکیں اور اپنے جذبات کے اظہار کے لیے بے ساختہ طور پر سعودی ولی عہد شہزادہ محمد بن سلمان کی تصویر کی جانب دوڑ گئیں۔ اس حالت میں منیرہ کی تصویر سوشل میڈیا پر وائرل ہو کر سعودی خواتین کے لیے ایک آئیکون کی صورت حیثیت اختار کر گئی ہے۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ سے گفتگو کرتے ہوئے منیرہ نے بتایا کہ "میں پہلی مرتبہ فلم دیکھنے کے لیے ریاض کے ایک سینیما ہاؤس گئی تھی۔ تفریحی مقاصد کے لیے حکومتی فیصلوں کے بارے میں خوشی اظہار کے واسطے میں شو کے ہال سے باہر آ گئی۔ میری نظر اچانک شہزادہ سلمان کی ایک تصویر پر پڑی جس کی لمبائی 3 میٹر اور چوڑائی 2 میٹر کے قریب تھی۔ میں ان فیصلوں کا خیر مقدم کرنے کے لیے تیزی کے ساتھ ولی عہد کی تصویر کی جانب چل پڑی۔ میری بہن نے اس موقع سے فائدہ اٹھاتے ہوئے میری تصویر لے لی"۔

منیرہ کے مطابق یہ تصویر انہیں پسند آئی اور انہیں اس پر فخر ہے۔ انہوں نے دو ماہ قبل اس تصویر کو اپنے ٹویٹر اکاؤنٹ پر پوسٹ کیا تھا۔ تاہم جمعرات کے روز سعودی خواتین کے حق میں جاری ہونے والے نئے فیصلوں کے بعد یہ تصویر بڑے پیمانے پر وائرل ہو گئی۔ منیرہ کے مطابق انہیں ہر گز توقع نہیں تھی کہ یہ تصویر سعودی خواتین کی مسرت کے اظہار کے حوالے سے مرکزی حیثیت اختیار کر لے گی۔

یاد رہے کہ سعودی عرب نے جمعرات کے روز سفری دستاویزات اور شہری حیثیت کے قوانین میں ترامیم کا اعلان کر دیا۔ ان ترامیم کے بعد سعودی خاتون کو خود سے اپنا پاسپورٹ حاصل کرنے اور دیگر کئی امور کا استحقاق مل جائے گا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں