.

سعودی عرب میں خطرناک اورزہریلے سانپوں کے شوقین سپیرے ملیے!

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

ویسے تو دنیا میں بے شمار مشغلے اور پسندیدہ مشاغل ہوسکتے ہیں مگر بعض لوگ ایسے مشاغل اختیار کرتے ہیں جو زندگی اور موت کا مسئلہ بن سکتے ہیں ۔ مثال کے طور پر سانپ ، بچھو اور دیگر مہلک جانور پالنے کا مشغلہ اختیار کرنے والے اپنی زندگی داؤ پر لگا کر یہ شوق پورا کرتے ہیں۔ سعودی عرب میں ایسے ہی ایک نوجوان کو سانپ پالنے کا دیوانگی کی حد تک شوق ہے۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کی ٹیم نے سعودی سپیرے نایف المالکی سے ملاقات کی ہے۔انھوں سانپوں اور بچھوؤں کے بارے میں حیران کن معلومات فراہم کی ہیں۔ ایسے عجیب وغریب مشغلے رکھنے والے افراد کو عوام میں خوب پذیرائی ملتی ہے اور میلوں ٹھیلوں میں وہ کرتب دکھا کر اپنے گرد لوگوں کا جم غفیر جمع کر لیتے ہیں۔

العربیہ کی ٹیم سے ملاقات کے وقت نایف المالکی نے اپنے ہاتھ میں زہریلے کوبرا سانپ پکڑ رکھے تھے اور وہ ان کے ساتھ کھیل تماشا کررہا تھا۔

نایف کا کہنا ہے کہ "میں نے چھوٹی عمر سے ہی زہریلے سانپ پالے تھے۔ میں ان کے ساتھ رہتا تھا۔ اس وقت سے مجھے سانپوں کا اچھا خاصہ تجربہ ہوگیا'۔

انہوں نے کہا، "مجھے سانپ کے شکار اور سانپوں کے بارے میں گہرائی تک معلومات حاصل کرنا پسند ہے۔مجھے سانپوں کا شوق پالتے 20 سال کا عرصہ گذرگیا ہے۔ اس عرصے کے دوران میں انتہائی زیریلے سانپ بھی دیکھے، کم زہریلے اور بے ضرر بھی۔ میں اس نتیجے پر پہنچا ہوں کہ سانپ ماحول دوست کائنات کی ایک حسین مخلوق ہے۔‘‘

سانپوں کے بارے میں پوچھے گئے ایک سوال کے جواب میں نایف علی نے کہا کہ 'عرب کوبرا کا کوئی جواب نہیں، اس کی خصوصیات دوسرے سانپوں سے مختلف ہیں۔ اس کی ایک خصوصیت یہ ہے کہ یہ آدھا جسم زمین پر کھڑا ہوجاتا ہے جو بہت زیادہ خوف اور ہیبت طاری کر دیتا ہے'۔

سعودی سپیرے کا کہنا ہے کہ کوبرا سانپوں کو ڈیل کرنا ہر عام خاص کے بس میں نہیں۔ اس کے لیے اچھا خاصا تجربہ اور مہارت درکار ہے۔ ہرکوبرا سانپ کی حرکات الگ الگ اور معین ہوتی ہیں۔ اگر سانپ کی اقسام اور ان کی حرکات وسکنات اور ردعمل کا پتا نہ ہو تو یہ جان لیوا بھی بن سکتا ہے۔

"سانپ عام طور پر غیر سماجی حیاتیات ہیں ، یہاں تک کہ آپس میں بھی ان کا میلان کم ہوتا ہے'۔۔

انھوں نے بتایا کہ غیر زہریلا کوبرا کی انواع میں راک سانپ، ابو سائور، ویکٹر اور ابو اویون ہیں۔ زہریلے مہلک عرب کوبرا، مشرقی قالین سانپ اور ریگستانی ام جینیب مشہور ہیں۔ بچھو کی 1500 اقسام ہیں جن میں 15 زہریلی بتائی جاتی ہیں۔