.

ریکارڈ مدت میں سعودی عرب کی تاریخی مساجد کا دوبارہ احیاء ومرمت

بحالی ومرمت کی جانے والی مساجد میں 40 برس بعد نمازوں کی ادائی ممکن ہوئی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

سعودی عرب کے ولی عہد شہزادہ محمد بن سلمان کی نگرانی میں تاریخی مسجدوں کی بحالی کے منصوبے کے روشنی میں مملکت کے طول وعرض میں دس مقامات پر تیس تاریخی مساجد کی بحالی ومرمت کا کام مکمل کر کے انہیں نماز کی ادائی کے قابل بنا دیا گیا ہے۔

مملکت کی سرکاری خبر رساں ایجنسی ’’ایس پی اے‘‘کی ایک رپورٹ کے مطابق یہ منصوبے کا پہلا مرحلہ تھا جس کے تحت 60 برس سے لیکر 1432 برس تک کی مساجد کا احیاء عمل میں آیا ہے۔ کئی مراحل میں 130 تاریخی مساجد کا احیاء ہوا۔ یہ کام 423 دن میں مکمل کیا گیا۔ اس منصوبے پر 50 ملین سعودی عرب لاگت آئی ہے۔

ولی عہد شہزادہ محمد بن سلمان نے 130 مساجد کے احیاء کے لیے خصوصی ہدایت جاری کر رکھیں تھیں۔ یہ کام سعودی عرب کی سپیشلسٹ کمپنیاں انجام دے رہی ہیں۔ سعودی محکمہ سیاحت وقومی آثار قدیمہ، وزارت اسلامی امور دعوت و رہنمائی، وزارت ثقافت اور سعودی انجمن برائے آثار قدیمہ کا یہ مشترکہ پروگرام ہے۔

اس سلسلے میں کئی باتوں کا دھیان رکھا جا رہا ہے۔ تاریخی مساجد کا اصل ڈھانچہ اور ان کی حقیقی شکل و صورت برقرار رکھی جارہی ہے البتہ خواتین کے لیے مصلے، معذوروں کے لیے بنیادی ضروریات، بجلی، پانی، ایئرکنڈیشن اور لاؤڈ اسپیکر کا اضافہ حسب حال کیا جا رہا ہے۔

پہلے مرحلے میں معروف صحابی حضرت جریر بن عبداللہ البجلی کے دور کی مسجد کا بھی احیا ہوا ہے۔ یہ مسجد طائف میں واقع ہے۔ بعض مورخین کا کہنا ہے کہ یہ اپنے دور میں بڑی مشہور درس گاہ بھی رہی ہے۔ یہ تین سو برس پرانی الاحسا کی شیخ ابو بکر مسجد جیسی ہے۔ بعض مساجد میں 40 برس سے نماز بند تھی۔