.

کرونا وائرس سے دماغی مسائل سوچ سے بھی زیادہ عام ہوسکتے ہیں: تحقیق

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

برطانیہ سے تعلق رکھنے والے ڈاکٹروں کی ایک ٹیم نے خبردار کیا ہے کہ کووِڈ-19 کے مہلک مرض سے دماغ میں پیدا ہونے والی پیچیدگیاں ابتدائی سوچ سے زیادہ عام ہوسکتی ہیں۔ ان پیچیدگیوں میں دماغی بخار ، واہمے، اعصابی توڑ پھوڑ اور دل کا دورہ شامل ہیں۔

کووِڈ-19سے شدید متاثرہ مریضوں کے بارے میں یہ ایک معلوم حقیقت ہے کہ ان کے اعصابی نظام میں پیچیدگیاں پیدا ہوجاتی ہیں لیکن اب یونیورسٹی کالج لندن کے ڈاکٹروں کی ٹیم کی تحقیق سے یہ بات سامنے آئی ہے کہ کرونا وائرس کے معمولی کیسوں والے افراد میں بھی سنگین دماغی مسائل پیدا ہوسکتے ہیں۔

اس ٹیم نے اسپتال میں داخل اعصابی علامتوں کے حامل کووِڈ-19 کے 43 مریضوں کا تفصیلی طبی معائنہ کیا ہے۔ان میں بعض کرونا وائرس کے مشتبہ کیس بھی تھے۔ تحقیق سے پتا چلا کہ 10 مریضوں کا عارضی طور پر دماغ کام نہیں کررہا تھا۔12 افراد دماغی حدت کا شکار تھے۔آٹھ کو دل کا دورہ پڑا اور آٹھ کے اعصابی نظام کو نقصان پہنچا تھا۔

اس ٹیم میں شامل یونیورسٹی کالج لندن کے کوئین اسکوائر انسٹی ٹیوٹ آف نیورالوجی کے ڈاکٹر مائیکل زیندی نے بتایا ہے کہ’’ہم نے توقع سے بھی کہیں زیادہ اعصابی مسائل سے دوچار افراد کی شناخت کی ہے۔ان کے دماغ میں گرمی کی حدت تھی اور اس کا ہمیشہ نظام تنفس کی شدید علامات سے تعلق نہیں ہوتا۔‘‘

یہ تحقیق جریدے برین میں شائع ہوئی ہے ۔اس سے یہ ظاہر ہوا ہے کہ اعصابی مسائل سے دوچار کسی بھی مریض کے دماغ اور ریڑھ کی ہڈی کے مائع مواد میں کووِڈ-19 نہیں تھا۔اس سے یہ پتا چلتا ہے کہ وائرس نے ان کے دماغوں پر براہ راست حملہ نہیں کیا تھا۔

اسی ادارے کے ایک اور محقق ڈاکٹر راس پیٹرسن کا کہنا ہے کہ’’اس بیماری کو نمودار ہوئے ابھی چند ماہ ہوئے ہیں،اس لیے ہم شاید ابھی یہ نہیں جانتے ہیں کہ کووِڈ-19کے طویل المیعاد کیا نقصانات ہوسکتے ہیں۔ڈاکٹروں کو ممکنہ اعصابی اثرات سے آگاہ ہونے کی ضرورت ہے کیونکہ ابتدا میں تشخیص سے مریض کے علاج میں بہتری لائی جاسکتی ہے۔‘‘

بدھ تک کرونا وائرس کے دنیا بھر میں ایک کروڑ 20 لاکھ سے زیادہ تصدیق شدہ کیس ریکارڈ کیے جاچکے ہیں۔اس سے پھیپھڑوں کے متاثر ہونے کے علاوہ مختلف پیچیدگیاں پیدا ہوجاتی ہیں۔اس تحقیقی مطالعے میں بتایا گیا ہے کہ وائرس سے متاثرہ مریضوں میں دماغ کی پیچیدگیاں عام ہوسکتی ہیں لیکن اس کا یہ مطلب نہیں کہ خلل دماغ کے کیس بھی عام ہیں۔