.

سعودی عرب کے جنوبی علاقہ جات کا سحر انگیز قدرتی حسن

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

مملکت سعودی عرب کے جنوبی حصے کا حسن و جمال ہمیشہ سے فوٹوگرافروں کے کیمروں کی آنکھ میں محفوظ کرنے کے لیے پسندیدہ موضوع رہا ہے۔ پہاڑوں کا سبزے کے ساتھ امتزاج، چٹانوں کے بیچ گنگناتے بہتے جھرنے اور پہاڑوں کے سروں پر منڈلاتے بادل دلوں کو اپنے سحر میں جکڑ لیتے ہیں۔

سعودی فوٹوگرافر محمد القرنی نے سعودی عرب کے جنوبی اضلاع کے حسین قدرتی مناظر کو اپنے کیمرے کی آنکھ میں محفوظ کیا ہے۔ ان کا مقصد سماجی ذرائع ابلاغ پر ان تصاویر کو پوسٹ کرنا اور اس سحر انگیز جمال کو ظاہر کرنا ہے جن سے یہ علاقے مالا مال ہیں۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ سے گفتگو کرتے ہوئے القرنی نے کہا کہ "سعودی عرب کے جنوبی اضلاع کئی جمالیاتی خصوصیات کے حامل ہیں جو انہیں دنیا کے خوب صورت ترین سیاحتی مقامات میں جگہ دیتے ہیں۔ یہاں کے سرسبز پہاڑ اور چٹانوں کے بیچ بہتے جھرنے آنکھوں کو خیرہ کر دیتے ہیں"۔

القرنی 6 برس سے پیشہ وارانہ سطح پر فوٹوگرافی انجام دے رہے ہیں۔ انہوں نے جدید ٹکنالوجی کے ذریعے قدرتی حسن و جمال کو فن پاروں کی شکل دے دی ہے۔ وہ فوٹوگرافی کے لیے ڈرون کیمرے کا استعمال بھی کرتے ہیں۔ القرنی کہتے ہیں کہ "عسیر صوبے کی برسات کی فضا سحر انگیز ہے۔ میں نے بلقرن اور المجاردہ ضلعوں میں آبشاروں اور جھرنوں کو کیمرے کی آنکھ میں محفوظ کیا۔ یہاں پہاڑوں کا سلسلہ بھی واقع ہے۔ ان کے بیچ متعدد وادیاں ہیں جن کناروں پر کھیت و کھلیان موجود ہیں۔ یہاں کے پہاڑ سبزے سے بھرے ہیں اور بڑے گھنے درخت امتیازی شان رکھتے ہیں"۔

سعودی فوٹوگرافر مزید کہتے ہیں کہ "اسی طرح میں نے النماص کے علاقے میں بادلوں سے معانقہ کرتے بلند و بالا پہاڑوں کو بھی تصاویر میں پیش کیا۔ یہاں بھی پودوں کی بھرمار نظر آتی ہے۔ اس علاقے کی فضا موسم گرما میں معتدل ہوتی ہے"۔