.

مکہ گھڑیال ٹاور کی طائف سے لی گئی تصویر کی سوشل میڈیا پر مقبولیت

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

سعودی عرب میں ایک پیشہ ور فوٹوگرافر کی طائف شہر سے مکہ معظمہ کے عالمی شہرت یافتہ گھڑیال ٹاور کی تصاویر اور ویڈیوز نے سوشل میڈیا پر دھوم مچا دی۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق سعودی فوٹو گرافر اور طائف میں فنون وثقافت آرگنائزیشن کے رکن عبدالقادر المالکی نے بتایا کہ اس نے 2000 میٹر کی مسافت سے گھڑیال ٹاور کی تصاویر لیں اورانہیں سوشل میڈیا پر پوسٹ کردیا۔ دیکھتے ہی دیکھتے وہ تصاویر تیزی کے ساتھ شیئر جانے لگیں اور صارفین نے انہیں بے حد پسند کیا۔ اس کا کہنا تھا کہ بلا شبہ ایک ایک شاندار منظر تھا۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ سے بات کرتے ہوئے المالکی نے کہا کہ میں خود بھی مکہ گھڑیال سے بہت زیادہ متاثر ہوں اور میں دور سے اس کی تصویر بنانا چاہتا تھا مگر مجھے اس کے لیے صاف موسم نہیں مل رہا تھا۔ میں نے اس کے لیے موسم کے صاف ہونے کا انتظار کیا۔ موقع ملتے ہی میں نے اس کی تصاویر بنائیں جو بہت صاف تھیں۔

اس کا کہنا تھا کہ صبح کے وقت لی گئی تصاویر میں جدہ شہر کے کچھ علاقے بھی دیکھے جاسکتے ہیں۔ اس کام کے لیے میں‌ نے پیشہ وارانہ فوٹو گرافری کے لیے استعمال ہونے والا کیمرہ استعمال کیا۔

فوٹو گرافر نے بتایا کہ مکہ ٹاور کی تصویر میں تین شہروں کی بلند چوٹیاں دکھائی دیتی ہیں جن میں مکہ معظمہ، جدہ اور الھدیٰ کے علاقے شامل ہیں۔