.

سعودی عرب میں جنسی ہراسانی کے مجرموں کی تشہیر کا قانون منظور

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

سعودی عرب میں انسداد ہراسیت کے قانون میں نئی ترمیم کی منظوری کابینہ نے دے دی ہے جس سے عوامی حلقوں کے بقول جنسی حملوں میں ملوث مجرموں کے خلاف کارروائی مؤثر اور متاثرین کو مزید تحفظ ملے گا۔

انسداد ہراسیت کے قانون 2018 میں ترمیم کی کابینہ نے گذشتہ ہفتے منظوری دی ہے جس کے تحت اب عدالت سے جنسی ہراسیت میں سزا پانے والے مجرموں کی تشہیر کی جائے گی اور اس کے اخراجات بھی انہی سے وصول کیے جائیں گے۔قانون میں اس ترمیم سے ایسے جرائم کی حوصلہ شکنی ہوگی اور متاثرین کی داد رسی ہو سکے گی۔

یاد رہے کہ مجرموں کے ناموں کی تشہیر خود بخود نہیں ہوگی اور نہ ہی اس کا اطلاق ہر کیس پر ہوگا بلکہ نہایت سنجیدہ نوعیت کے مقدمات میں اس پر عمل کیا جائے گا جو معاشرے کے لیے نقصان دہ ہوں۔ قانون میں اس ترمیم کے بعد اب ایسے جرائم میں ملوث افراد کو کسی بھی حساس نوعیت کی ملازمت میں نہیں رکھا جا سکے گا۔

خیال رہے کہ سعودی کابینہ نے بدھ کو ہراسیت کے انسداد کے لیے بنائے گئے قانون میں ترمیم کرتے ہوئے شق نمبر 3 کے اضافے کی منظوری دی تھی۔ ترمیم کے تحت انسداد ہراسیت کے قانون میں فیصلہ دیتے ہوئے جج کو یہ اختیار ہوگا کہ جرم ثابت ہونے پر کیس کی مقامی اخبارات میں تشہیر کا بھی حکم دے۔