.

سعودی عرب: کھیل وسیاحت کے لیے یکساں مقبول بادلوں سے اونچا فٹبال گراؤنڈ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

سطح سمندر سے 2500 میڑ کی بلندی پر ہونے والے فٹبال میج میں بادل بھی تماشائی بن کر مقابلہ دیکھ رہے ہوں تو کھلاڑیوں کا شوق کس درجہ کمال پر ہو سکتا ہے اس کا اندازہ لگانا مشکل نہیں۔ یہی کچھ معاملہ جازان کے الحشر پہاڑوں میں گھرے اس گراؤنڈ ہے جہاں بادلوں کا گزر نیچے دیکھا جا سکتا ہے۔

سعودی عرب سے تعلق رکھنے والے آپیٹکل فوٹو فوٹو گرافر عبد الرحمن مفرح الحریصی نے ’’العربیہ ڈاٹ نیٹ کو بتایا کہ ’’مملکت کا بلند ترین قدرتی فٹبال گراؤنڈ جازان ریجن میں جبال الحشر کے مشرقی قصبے القلہ میں واقع ہے۔ اس منفرد میدان کو القلہ کے باسیوں اور کھلاڑیوں نے 25 برس قبل تیار کیا۔‘‘

ان کا مزید کہنا تھا ’’کہ میدان سال کے اکثر اوقات دھند اور بادلوں میں گھرا رہتا ہے. اس کے اردگرد سدا بہار صنوبری جھاڑیاں بہار دکھاتی ہیں۔ یہاں فٹبال کے مختلف میچز منعقد ہوتے ہیں۔ سب سے پہلا فٹبال کپ مقابلہ یہاں 1997ء میں ہوا۔‘‘

یہ فٹبال گراؤنڈ سطح سمندر سے 2500 میڑ کی بلندی پر ہے۔ اتنی بلندی کی وجہ سے یہاں موسم خنک اور گرمیوں یہاں کی آب وہوا معتدل رہتی ہے۔ سردیوں میں درجہ حرارت صفر اور گرمیوں میں 25 ڈگری سینٹی گریڈ تک جاتا ہے۔

عبدالرحمن مفرح الحریصی نے گراؤنڈ کی شاندار تصویریں شیئر کرکے ٹوئٹر صارفین کو حیرت زدہ کر دیا ہے۔ یہ محض فٹبال گراؤنڈ کی تصویریں نہیں بلکہ قدرت کے شاہکار کی بھی عکاسی کر رہی ہیں جن میں علاقے کی خوبصورت اجاگر ہو رہی ہے۔

فوٹوگرافر کا کہنا ہے کہ ’علاقے کے نوجوان یہاں صرف فٹبال کھیلنے ہی نہیں آتے بلکہ موسم کا لطف اٹھانے بھی آتے ہیں‘۔ ’نوجوان سیاحت پر مامور اداروں سے مطالبہ کرتے ہیں کہ اس گراؤنڈ کو سیاحت کے لیے استعمال کیا جائے‘۔

’شہر کی میونسپلٹی یہاں سہولتیں فراہم کرے، گراؤنڈ میں حفاظتی باڑ لگائے اور فٹبال ٹورنامنٹ کرائے تو کوئی بعید نہیں کہ ملک بھر سے نوجوان یہاں میچ کھیلنے ہی نہیں بلکہ دیکھنے کے لیے بھی آئیں گے‘۔ انہوں نے کہا ہے کہ ’یہاں خوبصورت وادیاں بھی ہیں، سبزہ زار بھی ہیں اور بہترین موسم بھی ہے‘۔