.

بحرینی بنک کی منفردپیش کش، کووِڈ-19 کی ویکسین لگوانے والے صارفین کو قرضے کی فیس معاف

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

بحرین میں ایک بنک نے کروناوائرس کی ویکسین لگوانے والے صارفین کی حوصلہ افزائی کے لیے ایک منفرد پیش کش کا اعلان کیا ہے اور کہا ہے کہ ویکسین لگوانے والوں کو قرضے کی فیس میں معافی کے علاوہ بنک کاری کی مختلف سہولتیں مہیا کی جائیں گی۔

السلام بنک کی انتظامیہ کا کہنا ہے کہ کووِڈ-19 کی ویکسین لگوانے والے صارفین کو کسی قسم کی فیس کے بغیر مختلف مالیاتی سہولتیں دی جائیں گی اوروہ مزایا سوشل ہاؤسنگ پروگرام سمیت مختلف قرضوں کی سہولت سے استفادہ کرسکتے ہیں۔

البتہ اس پیش کش سے استفادہ کرنے والے صارفین کو محکمہ صحت کا جارہ کردہ سرکاری میڈیکل سرٹی فکیٹ یا بحرین کی ’’بی اوئیر‘‘ ایپ'BeAware'ثبوت کے طور پر دکھانا ہوگی۔

السلام بنک کے ریٹیل بنکنگ کے سربراہ محمد بہیج کا کہنا ہے:’’ہمیں فخر ہے کہ ہم ’’السلام اقدام‘‘ شروع کررہے ہیں،اس کا مقصد بحرینی کمیونٹی کے اہل افراد کی کووِڈ-19 کی ویکسین لگوانے کے لیے حوصلہ افزائی کرنا ہے تاکہ ان کا ایک فرد یا وسیع ترکمیونٹی کی حیثیت سے تحفظ کیا جاسکے۔‘‘

واضح رہے کہ خلیج تعاون کونسل کے رکن ممالک میں کووِڈ-19 کی ویکسین لگوانے والوں کی حوصلہ افزائی کے لیے مختلف مراعات کا اعلان کیا گیا ہے۔ویکسین کے انجیکشن لگوانے والوں کو ڈرائیونگ کے اسباق میں رعایت دی جارہی ہے،مفت میں کافی پیش کی جارہی ہے اور ٹیکسی کے مفت سفر کی سہولت دی جارہی ہے۔

لیکن بحرین میں کووِڈ-19 کی ویکسین کی حوصلہ افزائی کے لیے کچھ زیادہ ہی سہولتیں دی جارہی ہیں۔گذشتہ ہفتے بحرین گراں پری نے یہ اعلان کیا تھا کہ ویکسین لگوانے یا کووِڈ-19 کے مرض سے صحت یاب ہونے والے افراد اس سال فارمولا ون کے ٹکٹ خرید کرنے کے اہل ہوں گے۔

قبل ازیں اسی ماہ بحرین کے دارالحکومت منامہ میں واقع العالی مال نے اپنے باہر خوراک کی اشیاء فروخت کرنے والوں سے کرایہ نہ لینے کا اعلان کیا تھا۔اس کے علاوہ اس نے اپنے کار پارک میں خوراک سے لدے ٹرکوں کو اشیاء بیچنے کی بھی اجازت دے دی تھی۔اس سہولت کا مقصد کروناوائرس کی پابندیوں سے متاثرہ کاروباریوں کی مالی معاونت ہے تاکہ انھیں اپنا پاؤں پر کھڑا ہونے میں مدد دی جاسکے۔