.

فلسطینی ڈاکٹر نے یقینی موت سے دوچار شیرخوار بچی کی زندگی کیسے بچائی:ویڈیو

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

فلسطین میں سماجی رابطوں کی ویب سائٹس پر ایک ویڈیو کلپ وائرل ہوا ہے جس میں ایک کم سن بچی کی یقینی موت کو زندگی دینے پر فلسطینی مسیحا کو غیرمعمولی طور پر خراج تحسین پیش کیا جا رہا ہے۔ اس خبر سے منسلک ایک ویڈیو میں آپ دیکھ سکتے ہیں کہ رات کے وقت بچی کے سانس میں تکلیف کے بعد اسے اسپتال لائے جانے کے بعد اس کی حالت مزید بگڑ گئی۔

بچے کے والدین شدید خوف اور پریشانی سے دوچار دیکھے جاسکتے ہیں۔ اسپتال پہنچنے پر بچی کی سانس رک گئی مگر ڈاکٹر نے اسے اس کے والدین سے اپنے ہاتھ میں لیا اور اس کی کمر کو آہستہ آہستہ تھپتھپایا جس سے اس کی حالت بہتر ہوگئی۔

یہ واقعہ غرب اردن کے شمالی شہر جنین میں قباطیہ کے مقام پر پیش آیا۔ تفصیلات کے مطابق بچی کو سانس میں تکلیف کے بعد اسپتال لایا گیا تو اس کی حالت مزید بگڑ گئی اور اس کے والدین بھی پریشانی کا شکار ہوگئے۔اس موقعے پر ڈاکٹر مجاھد نزال نے بچی کواپنے ہاتھوں میں لے کر اس کی کمر تھپتھپانا شروع کی جس سے اس کی حالت بہتر ہوگئی۔

ڈاکٹر نزال نے 'فیس بک' پر ایک پوسٹ مین لکھا کہ بچی کے والد پر غشی کے دورے پڑ رہے تھے اور بچی کی حالت دیکھ کر مدد کے لیے چلا رہا تھا۔