.

بروقت طبی امداد نے جسمانی طور پرجڑے دو سعودی بچوں کی زندگی بچا لی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

محکمہ صحت سعودی عرب کا کہنا ہے کہ مکہ معظمہ کے ایک نجی اسپتال میں جسمانی طور پر دو جڑواں بچوں کو لایا گیا جو زندگی موت کی کشمکش میں مبتلا تھے۔ تاہم فوری طبی امداد کی فراہمی کے بعد بچوں کو بچا لیا گیا ہے۔

سعودی محکمہ صحت کے حکام نے بتایا کہ مکہ معظمہ کے ایک اسپتال میں لائے گئے جسمانی طور پر جڑواں بچوں کے سینے اور پیٹ آپس میں جڑے ہوئے تھے۔ ان کے سر اور ٹانگیں الگ ہیں جب کہ بازو تین ہیں۔

اسپتال میں لائے جانے کے بعد ان کا فوری طبی معائنہ کیا گیا اور ابتدائی ٹیسٹ لیے جانے کے بعد ان کے مزید علاج کے لیے کوششیں شروع کر دی گئی ہیں۔

طبی ذرائع نے بتایا کہ جڑواں بچوں کا ابتدائی معائنہ کیا گیا۔ ان کے جسم جگر ، ریڑھ کی ہڈیاں جڑی ہوئی تھیں۔ تاہم دونوں کے دو چھوٹے گردے نسبتا ٹھیک کام کر رہے ہیں تاہم دونوں کا جگر ایک ہے۔

مکہ مکرمہ میں زچگی اور بچوں کے اسپتال کے میڈیکل ڈائریکٹر ڈاکٹر عطیہ الزہرانی نے بتایا کہ ایسے پیچیدہ اور مشکل کیسز میں بچوں کا علاج ڈاکٹروں کے لیے ایک چیلنج ہوتا ہے۔

دوسری طرف، مکہ مکرمہ میں زچگی اور چلڈرن اسپتال کے ایگزیکٹو ڈائریکٹر ڈاکٹر ہلال المالکی نے کہا کہ اسپتال کی بہترین طبی سہولیات فراہم کی جا رہی ہیں۔ ان کا کہنا ہے کہ اللہ کے فضل وکرم سے بچوں کی زندگی بچالی جائیں گی۔