.

سعودی عرب: وادی ’ہرجاب‘ میں بارش کے پانی سے وجود میں آنے والے جادوئی مناظر

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

سعودی عرب کے جنوب میں واقع وادی ’ہرجاب‘ اپنے قدرتی حسن اور فطرتی جمالیاتی مناظرکی بہ دولت مشہور ہے۔ حال ہی میں وادی ہرجاب میں ہونے والی بارش کے پانی نے زمین پر کچھ ایسے مناظر تخلیق کیے جنہیں دیکھنے والی ہر آنکھ دیکھتی رہ جاتی ہے۔

بارش کے پانی سے وادی ہرجاب خوبصورت مناظر اور حیرت انگیز جمالیاتی پینٹنگز کی شکل اختیار کرگئی۔ ایک سعودی فوٹوگرافر نے وادی ہرجاب میں پانی کے بہاؤ کی شان و شوکت کی تصاویر اور جنوبی بیشہ میں واقع فالجا ڈیم کے کے دلفریب مناظر کواپنے کیمرے میں محفوظ کیا۔

یہ ڈیم درعا سطح مرتفع واقع سب سے اہم چھوٹے ڈیموں میں سے ایک سمجھا جاتا ہے۔ یہ ڈیم دیہاتیوں نے نے اسے بارش کے پانی کو محفوظ رکھنے اور اپنے مویشیوں کی پانی ضرورت کے لیے بنایا تھا جو اب ایک خوبصورت جھیل کی شکل اختیار کرگیا ہے۔

فوٹوگرافر "سیاف دشن" نے وادی بیشہ کی سب سے اہم ندیوں میں سے ایک کی منظر کشی کی۔ اس وادی کا تذکرے عرب لٹریچر میں بھی جا بہ ملتے ہیں۔ وادی السدر کے درختوں کی کثرت کے لیے بھی مشہور ہے۔

وادی بیشہ جنوبی خیبر کے مرکز کے جنوب مغرب میں الصفحہ اور بادیہ الحزم کی بلندیوں سے اترتی ہے اور اس کا پانی شمال میں الحیفہ گاؤں کو بھی سیراب کرتا ہے۔

وادی ہرجاب صمخ کے وسط میں زمینی پانی کا ایک اہم ذریعہ ہے جہاں کے باسی اپنی فصلوں کی آب پاشی کے لیے اس کے پانی پر انحصار کرتے ہیں۔ پانی کے نالے وادی کے دونوں اطراف میں بہتے ہیں۔ یہ پانی مقامی آبادی کے مویشیوں کی ضرورت بھی پوری کرتا ہے۔

فوٹو گرافر سیاف وادی ہرجاب میں پانی کے بہاؤ کے حسن کے مناظر سے متاثرہوئے بغیر نہیں رہ سکا۔ اس وادی کے پانی کا سرچشمہ مکرثا پہاڑ ہے۔ اور اس کا پانی الحیفہ کے قریب وادی بیشہ کو سیراب کرتا ہے۔ اس نے ’العربیہ ڈاٹ نیٹ‘ کو بتایا کہ اس کا پانی وادی تلاع اور وادی صہی میں بہتا ہے۔ زیادہ تر پانی بارش کے نتیجے میں جمع ہوتا ہے۔

حال ہی میں اس علاقے میں ہونے والی موسلا دھار بارش نے چند گھنٹوں کے اندر اندر وادی بیشہ اور وادی ہرجاب کو سیراب کردیا تھا۔ ندی نالے بہہ نکلے جنہوں نے نہ صرف ڈیم اور جھیلیں لبا لب بھردیں بلکہ بہتے پانی نے ایسے شاہ کار فطری مناظر بھی تخلیق کیے جنہیں دیکھنے والے قدرت کی صناعی اور اس کی تخلیق کا اعتراف کیے بغیر نہیں رہ سکے۔