.

العلاء میں ہمہ نوع فوائد کے حامل عربی مورنگا(سُونجھنا) کی بڑے پیمانے پرکاشت

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

سعودی عرب کے تاریخی علاقے العلاء میں ہمہ نوع طبی فوائد کے حامل عربی مورنگا(سُونجھنا) کو کئی ایکڑوں پر کاشت کیا جارہا ہے۔اس علاقے میں کاشت کاروں کو کھجور اور مالٹے (سائٹرس)کے بعد خطے کی تیسری سب سے بڑی سمجھی جانے والی فصل سونجھنا(سوہانجنا) اگانے کا طریق کارسکھایا جارہا ہے۔

سونجھنا مختلف شکلوں میں کاسمیٹک، دواسازی اور صابن کی مصنوعات میں استعمال ہوتا ہے اوراس کی فصل کاشت کاروں اور صارفین دونوں کے لیے بہت سودمند ثابت ہورہی ہے۔مارکیٹ میں اس کی مانگ بتدریج بڑھتی جارہی ہے۔

سعودی عرب کے شاہی کمیشن برائے العلاء نے اس تاریخی علاقے میں شعبہ زراعت کی ترقی اورمعاونت کے لیے2019 میں پیریگرینا سینٹر قائم کیا تھا تاکہ کسانوں میں اس فصل کی اہمیت اور اس کی کاشت کے بارے میں آگہی پیدا کی جاسکے۔

یہ مرکزکسانوں سے بیج بھی اکٹھے کرتا ہے،انھیں صاف کرتا ہے اورپھرانھیں تیل نکالنے والوں کوبھیجتا ہے۔ ہر فارم کا اپنا ایک کوڈ ہے جواپنے بیجوں کے معیارکو ٹریک کرتا اورجانچ سکتا ہے۔

العلاء پیریگرینا سینٹرکی پیداواری رابطہ کار رغدالبوشی بتاتی ہیں کہ سونجھنا کے بیجوں کی باقیات کو دیگر مصنوعات میں استعمال کے لیے خصوصی طریقے سے محفوظ کیا جاتا ہے۔

العلاء کے پرانے قصبے کے باشندوں میں سے جو مقامی لوگ اور سیاح یہاں آتے رہتے ہیں،اُم سعود الشاثری ان میں سے ایک ہیں۔ان کا کہنا ہے کہ وہ کچھ عرصہ پہلے تک اپنے استعمال کے لیے سونجھنا درآمد کرتی تھیں لیکن اب اس کی معیاری مصنوعات یہیں دستیاب ہیں۔انھوں نے بتایا کہ سُونجھنا صابن،کاسمیٹک مصنوعات اور مختلف طبی ادویہ کی تیاری میں استعمال ہوتا ہے۔