جدہ میں بین الاقوامی حج اور عمرہ کانفرنس ونمائش کا شاندار افتتاح

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
7 منٹس read

سعودی عرب میں گورنر مکہ مکرمہ شہزادہ خالد الفیصل کی صدارت میں پیر کو انٹرنیشنل حج و عمرہ کانفرنس و نمائش کا افتتاح جدہ سپر ڈوم میں ہوا ہے۔ کانفرنس اور نمائش کا اہتمام وزارت حج و عمرہ ضیوف الرحمن پروگرام کے تعاون سے کر رہی ہے۔ کانفرنس اور نمائش کا عنوان ’جدت کی طرف منتقلی‘ ہے۔

سرکاری خبر رساں ایجنسی ایس پی اے کے مطابق خالد الفیصل نے نمائش کا دورہ کیا۔ وزیر حج وعمرہ ڈاکٹر توفیق الربیعہ ہمراہ تھے۔ کانفرنس میں 20 سے زیادہ ممالک کے وزرا شریک ہیں۔

ڈاکٹر توفیق الربیعہ نے کہا کہ ’مکمل اطمینان و سکون اور آرام وراحت کے ساتھ زائرین کو حج، عمرہ اور زیارت کی سہولت فراہم کرنا سب سے بڑا ہدف ہے۔ ڈاکٹر الربیعہ نے کہا کہ گزشتہ برسوں کے دوران حج و عمرہ نظام میں تیزی سے اچھی تبدیلیاں آئی ہیں۔ ان کا سہرا بڑے منصوبوں کو جاتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ بانی مملکت شاہ عبدالعزیز کےعہد سے اب تک ضیوف الرحمن کی سہولت کے لیے عظیم منصوبوں کا تسلسل جاری ہے۔

حج وعمرہ ڈیجیٹل سروسز

کانفرنس کے پہلے سیشن میں مقررین نے حجاج کرام اور عمرہ زائرین کی مزید بہتر رہنمائی کے لیے ڈیجیٹل سروسز کے حوالے سے تبادلہ خیال کیا گیا تاکہ اسمارٹ ایپس کو استعمال کرتے ہوئے خدمات کو مزید آسان اور بہتر بنایا جا سکے اس ضمن میں مختلف موضوعات زیر بحث آئے۔

اجلاس کے آغازمیں نائب وزیر حج وعمرہ ڈاکٹر عبدالفتاح مشاط نے اس بات پر زور دیا کہ وزارت حجاج کی خدمت کے تجربے کو مزید بہتر بنانے کے لیے ہرممکن کوشش کرتی رہے گی تاکہ ان کا یہ سفر آسان اور پر راحت بنایا جا سکے۔ اس ضمن میں جدید ٹیکنالوجی کے استعمال کو مفید بناتے ہوئے مختلف خدمات کو ایک ہی پلیٹ فارم پر اکھٹا کیا جائے گا تاکہ وسیع پیمانے پرجدید ٹیکنالوجی سے فائدہ اٹھایا جا سکے۔

کانفرنس میں 20 ملکوں کے وزرا شریک ہیں
کانفرنس میں 20 ملکوں کے وزرا شریک ہیں

خصوصی حج وعمرہ ٹاسک فورس کے سربراہ بریگیڈئیر محمد البسانی نے کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہا گزشتہ برسوں میں جدید ڈیجیٹل ٹیکنالوجی کے تجربے کافی کامیاب رہے۔ انہوں نے مزید کہا سکیورٹی فورسز کے پیش نظر تین اہم نکات ہوتے ہیں جن میں پہلا امن عامہ، دوسرا نکتہ نظم وضبط کا قیام اور تیسرا انسانی امور پر مبنی ہے۔ انہوں نے واضح کیا کہ سکیورٹی فورسز کے پیش نظر ضیوف الرحمان کو ہر قسم کی سہولت فراہم کرنے پر ہم بھرپور توجہ مرکوز کرتے ہیں۔

البسامی نے ماضی میں حج آپریشنز کے حوالے سے کہا کہ ماضی میں حج سیزن کے دوران 95 ہزار سے زائد ایسی گاڑیاں مشاعر مقدسہ میں داخل کی جاتی تھیں جو حج آپریشن سے متعلق نہیں ہوتی تھیں جس کی وجہ سے شاہراہوں پر ٹریفک کا رش ہوتا اور حجاج کرام کو دشواری کا سامنا کرنا پڑتا تھا جسے دیکھتے ہوئے حج سیزن میں 9 سیٹوں سے کم والی گاڑیوں کا داخلہ منع کر دیا گیا جس سے ٹریفک کی بھیڑ پر کافی قابو پایا جا سکا۔

وزارت خارجہ کے سفیر عبدالمنعم المحمود نے اپنے خطاب میں کہا سال 1440 ہجری میں ڈیجیٹل ویزوں کے اجرا کے احکامات صادر ہوئے جسے مدنظر رکھتے ہوئے جدید ترین موبائل ایپ لانچ کی گئی جو مکمل طورپر سعودی ماہرین نے ڈیزائن کی تھی۔ اس ایپ کو دو ماہ قبل کویت میں متعارف کرایا گیا ہے گیا یہ ایپ ماضی میں استعمال ہونے والی ایپ سے قطعی مختلف ہے جس کے ذریعے عازم حج اپنے گھر میں بیٹھے بیٹھے اپنا ڈیٹا سینٹر کو ارسال کر سکتا ہے۔

کانفرنس سے ’توکلنا‘ ایپ کے سی ای او انجینئر عبداللہ العسی نے بھی خطاب کرتے ہوئے کرونا کی وبا کے دوران توکلنا ایپ کی افادیت پر روشنی ڈالی۔

ضیوف الرحمان سروسز منصوبے کے سی ای او انجینئر ھانی دھان نے اجلاس میں اختتامی کلمات ادا کرتے ہوئے کہا ضیوف الرحمان کو بہتر سےبہتر خدمت فراہم کرنا ہمارا نصب العین ہے جس کے لیے ہمیشہ کوشاں رہیں گے۔ انہوں نے حجاج کی خدمت کےلیے ایجاد و ڈیجیٹل تجربے کو بہتر بنانے پر تبادلہ خیال کیا۔

ضیوف الرحمان کی خدمت میں جدت اور قیادت

حج وعمرہ خدمات کانفرنس ونمائش کے پہلے روز تین سیشنز ہوئے جس میں 16 مقررین نے اظہار خیال کیا۔ مقررین نے ضیوف الرحمان کی خدمت کےلیے ڈیجیٹل تجربے کو سراہتے ہوئے اسے وقت کی ضرورت قرار دیا۔ اجلاس کے دوسرے سیشن کا عنوان ’ضیوف الرحمان کی خدمت میں جدت اور قیادت‘ منتخب کیا گیا جس میں تین مقررین نے ضیوف الرحمن کی خدمت کے حوالے سے اپنے تجربات سے آگاہ کیا۔

اجلاس کا آخری سیشن کا افتتاح نائب وزیر صنعت و معدنی وسائل اور فلاحی تنظیم ’ھدیہ الحاج والمعتمر‘ کے بورڈ آف ڈائریکٹر کے چیئرمین انجینئر اسامہ الزامل نے کیا۔ اس موقع پر انہوں نے اس امر کی یقین دہانی کی کہ مملکت میں دیگر ممالک کے مقابلے میں رضاکاروں کی تعداد کافی زیادہ ہوتی ہے۔ مملکت کے بیٹے اور بیٹیاں رضاکارانہ طور پر حجاج اور عمرہ زائرین کی خدمت میں مصروف رہتے ہیں۔

سعودی فیڈریشن آف چیمبرز کے نائب صدر ھشام بن محمد الکعکی نےکہا ’مکہ چیمبر بہت سے طبقوں کی خدمت کرتا ہے جن میں سب سے اہم چھوٹے اور درمیانے درجے کے کاروباری ادارے شامل ہیں۔

سعودی پوسٹ کے نائب صدر برائے مارکیٹنگ ریان الشریف نے کہا ’سعودی پوسٹ کی جانب سے حج وعمرہ سے متعلق دو نکات کو مدنظر رکھا جاتا ہے جن میں روایتی اور ڈیجیٹل طریقے کی لاجسٹک خدمات ہیں جو عازمین حج کی آمد سے قبل سے لیکر روانگی تک کی سہولت کی فراہمی کو یقینی بنایا جاتا ہے۔

دریں اثنا عرب ممالک سے متعلق مطوف کمپنی کے سی ای او ماہر جمال کا کہنا تھا کہ ’جدت وقیادت حجاج کی خدمت کے لیے اہم ہیں ان تقاضوں کو مدنظر رکھتے ہوئے حجاج کی خدمت کو اولیت دی جاتی ہے ‘۔

اجلاس سے ترکی، یورپ، امریکہ اور آسٹریلیا مطوف کمپنی کے سی ای او احمد یوسف بشناق نے خطاب کرتے ہوئے کہا کرونا کی وبا کی وجہ سے جدید ٹیکنالوجی کا استعمال کرتے ہوئے اسے مفید بنانے کے لیے کافی مفید اقدامات کیے گئے۔ انہوں نے اسمارٹ خیمے مہم کو سراہتے ہوئے اسے اہم ترین ضرورت قرار دیا جس کے ذریعے حجاج کی شناخت ’فیس اسکینگ‘ کے ذریعے ممکن ہو سکے گی تاکہ فوری طور پر حجاج کے بارے میں معلوم ہو سکے گا کہ حاجی کا قیام کس خیمے میں ہے۔

اجلاس کا اختتام جنوبی ایشیا مطوف کمپنی کے صدر فواز دانش کے کلمات پر ہوا جس میں انہوں نے جدید ٹیکنالوجی کے استعمال پر زور دیتے ہوئے اسے اہم قرار دیا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں