سویڈش دادی اماں نے فری فال کا 100 سالہ ریکارڈ توڑ ڈالا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

سویڈن سے تعلق رکھنے والی ایک سو تین سالہ دادای اماں نے ایک اور ساتھی کے ہمراہ کامیابی سے چھاتے کے ساتھ جہاز سے چھلانگ لگا کر دنیا کا نیا ریکارڈ اپنے نام کر لیا ہے۔ زمین پر اترنے کے بعد انہوں نے کہا وہ اس کامیابی کا جشن ’’ایک چھوٹی کینڈی‘‘ کھا کر منانا چاہتی ہیں۔

روٹ لارسن نے سویڈش خبر رساں ایجنسی سے بات کرتے ہوئے کہا کہ ’’ایسا کرنا بہت اچھا لگا، میں یہ کام کرنے کا ایک مدت سے سوچ رہی تھی۔‘‘ انہوں نے اپنی بات جاری رکھتے ہوئے کہ ’’سب کچھ پلان کے مطابق مکمل ہوا۔‘‘

لارسن نے پیرا ٹروپنگ کا مشن سویڈن کے دارلحکومت اسٹاک ہوک کے جنوب مغربی میں 240 کلومیٹر کی مسافت پر واقع موٹالا شہر میں مکمل کیا۔ ان کے اہل خانہ اور دوست ہوائی اڈے پر استقبال کے لیے موجود تھے۔

فری فال کا مظاہرہ کرنے والی معمر سویڈش خاتون اور ان کے ہمراہ طیارے سے چھلانگ لگانے والے ساتھی نہایت آرام سے زمین پر اترے۔ معاون عملہ دادی اماں کے زمین پر لینڈ کرتے ہوئے ضروری آلات لے کر ان کے قریب پہنچ گیا جنہیں وہ عام زندگی میں چلنے کے لیے بطور سہارا استعمال کرتی ہیں۔

بزرگ پیرا ٹروپر لارسن کے مطابق ’’بلندی سے آہستہ آہستہ زمین پر اترنا، پرلطف کام ہے۔‘‘

دنیا کے منفرد ریکارڈ کا ریکارڈ رکھنے والی گنز بک آف ورلڈ ریکارڈ کے نمائندے اس موقع پر موجود تھے۔

روٹ لارسن نے 103 برس 259 دن عمر کے ساتھ ساتھی کے ہمراہ فری فال کا مظاہرہ کر کے دنیا کا ریکارڈ توڑا جو اس سے پہلے 103 برس 181 دنوں کی عمر والے ایک اور شخص نے قائم کیا تھا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں