سعودی عرب کی 16جامعات دنیا میں اعلیٰ تعلیم کے بہترین اداروں کی درجہ بندی میں شامل

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

سعودی عرب کی 16جامعات نے سال 2023ء کے لیے عالمی شہرت یافتہ کواکواریلی سائمنڈز (جی ایس) کی جانب سے جاری کردہ جامعات کی عالمی درجہ بندی کے انڈیکس میں جگہ بنا لی ہے۔

تازہ درجہ بندی میں 2022ء کے مقابلے میں مملکت کی مزیددو جامعات کواس فہرست میں شامل کیا گیا ہے اور 2019ء کے مقابلے میں سات مزید یونیورسٹیاں درجہ بندی میں شامل ہوئی ہیں۔

شاہ عبدالعزیز یونیورسٹی دنیا بھرکی قریباً1500 یونیورسٹیوں میں 106 ویں نمبر پر ہے۔سعودی پریس ایجنسی کی رپورٹ کے مطابق، ’’اس نئی پیش رفت کے ساتھ، مملکت دنیا کی ایک سو بہترین جامعات کی فہرست میں شام ہونے سے صرف چھے نمبروں کی دوری پر ہے۔اس فہرست میں دنیاکی 100 بہتر جامعات شامل ہیں‘‘۔

جامعہ شاہ عبدالعزیز کے بعد شاہ فہد یونیورسٹی برائے پِٹرولیم اور معدنیات اورشاہ سعود یونیورسٹی کیو ایس کی درجہ بندی میں شامل ہیں۔الفیصل اور ناردرن بارڈر یونیورسٹیز بھی 2023 کی درجہ بندی میں پہلی مرتبہ شامل ہوئی ہیں۔

ایس پی اے کے مطابق’’ کیو ایس اپنی درجہ بندی میں کئی معیاروں کے مطابق جامعات کا جائزہ لیتا ہے، بنیادی طور پر یونیورسٹی کی ساکھ کا اندازہ دنیا بھر میں تعلیمی آراء کے سب سے بڑے سروے کے ذریعے لگایا جاتا ہے۔اس سروے میں ایک لاکھ 30 ہزار سے زیادہ ماہرین حصہ لیتے ہیں۔

2023ء کی درجہ بندی میں امریکا کامیساچوسٹس انسٹی ٹیوٹ آف ٹیکنالوجی (ایم آئی ٹی)، برطانیہ کی کیمبرج یونیورسٹی اور امریکا کی سٹینفورڈ یونیورسٹی سرفہرست ہیں۔ وہ بالترتیب پہلے ، دوسرے اور تیسرے نمبرپر ہیں۔

اس سے قبل اپریل میں ایس پی اے نے سکیماگوانڈیکس کا حوالہ دیتے ہوئے بتایا تھا کہ سعودی عرب سائنسی مطالعات کی اشاعت کے شعبے میں عرب دنیا میں پہلے اورعالمی سطح پر25 ویں نمبر پرہے۔اطلاعات کے مطابق سعودی جامعات نے مملکت میں ہونے والی تمام سائنسی تحقیق میں 93 فی صد حصہ ڈالا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں