’موسیقی کا جو مزہ گراموفون میں ہے وہ جدید آلات میں نہیں‘

’پرآنے آلات کی ریکارڈنگ اور میگزین جمع کرنے والے سعودی سے ملیے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

سعودی عرب میں نوادرات جمع کرنے کے مشغلے میں مصروف ادیب خالد ایک ایسے نوجوان ہیں جنہیں موسیقی کے جدید آلات اور جدید دور کی ڈیجیٹیل کتابوں کے بجائے پرانے جرائد اور میگزین زیادہ پسند ہیں۔ ادیب نے اندرون اور بیرون ملک سے گانے بجانے کے پرانے آلات اور شوبز سے متعلق کئی پرانے میگزین اور کتابیں جمع کررکھی ہیں۔

مرور زمانہ کے ساتھ ہونے والی تبدیلیوں اور جدت نے ادیب کو متاثر نہیں کیا بلکہ اس کی گھڑی کی سوئی ماضی کے وقتوں میں رُک گئی۔ ان کا کہنا ہے کہ موسیقی سننے کا جو مزہ گراموفون میں ہے وہ موبائل اور جدید آلات میں نہیں۔

ادیب کا خیال ہے کہ جب آپ پرانی موسیقی اور جرائد کی طرف جاتے ہیں تو گویا آپ ماضی میں سفر کررہے ہیں۔ ٹیکنالوجی کی بدولت آج ہمیں نت نئے آلات دیکھنے کو ملتے ہیں مگر ہم فن کی اصل کو دیکھنا چاہتے ہیں تو ہمیں ان پرانے دور کے آلات کی تلاش کرنا ہوگی۔

’العربیہ ڈاٹ نیٹ‘ سے بات کرتے ہوئے ادیب خالد نے کہا ہے کہ اندرون اور بیرون ملک سفر کے دوران پرانے دور کی موسیقی کی ریکارڈنگ، پرانے آلات اور گذرے وقتوں میں شائع ہونے والے جرائد میرا مطمع نظر ہوتے ہیں۔ آواز کی اصل اور پاکیزگی ہمیں پرانے دور کے آلات ہی میں ملتی ہے۔

ادیب کا کہنا ہے کہ میں اچھے پُرزوں کی تلاش میں رہتا ہوں کیونکہ وہ بیچنے والے پر ڈرم آزمانے کو ترجیح دیتا ہے اور اس بات کو یقینی بنانے کے لیے اسے دیکھتا ہے کہ آواز کی پاکیزگی کو متاثر کرنے والی کوئی خراشیں نہیں ہیں۔

ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ پرانی ڈسک اور کسی جریدے کے سرورق پرگلوکار کے دستخط شدہ کتاب اس کی قیمت کو اور بھی بڑھا دیتے ہیں۔ ادیب کا کہنا ہے کہ سنہ 1940ء کی دہائی کے گراموفون پربجنے والے گانے ہی اصل موسیقی ہے۔ مُجھے یقین ہے کہ یہ ڈسک فون پر سننے سے زیادہ خوشگوار اور خوبصورت ہے۔ان کے نجی مجموعہ میں ام کلثوم کا گانا " وحقك أنت المنى والطلب" بھی موجود ہے جوانہوں نے 1925ء میں ریکارڈ کرایا تھا۔

ادیب خالد کے جمع کردہ کتابوں کے ذخیرے میں فن کار عبدالحلیم حافط کی سوانح حیات پر لکھی گئی کتاب ’اعزالناس‘ بھی شامل ہے۔کتاب کے سرورق پر مصنف کی طرف سے پچھلی کتاب کے مالک کو تحفہ کے طور پر درج ایک نوٹو موجد ہے۔ اس کے علاوہ دیوان نازک الملائکہ کا شاعری کا مجموعہ بھی موجود ہے۔ اس کتاب پربھی ایک نوٹ موجود ہے جس میں اسے ہدیہ کیا گیا ہے۔اس کے دل کے قریب ترین رسالوں میں سے ایک "الاثنین والدنیا" شامل ہے جس کے ایک شمارے میں سنہ 1945ء شاہ عبدالعزیز آل سعود کے دورہ مصر کی تصاویر شایع کی گئی ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں