ملکہ الزبتھ کی آخری آرام گاہ کن پیاروں کی قبروں کے قریب بنائی جائے گی؟

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

اس خبر کے ساتھ شائع کردہ مرکزی تصویر ملکہ الزبتھ دوم کی وفات سے قبل ایک عام تصویر تھی۔ لیکن جمعرات 8 ستمبر کو ان کی وفات کے بعد یہ تصویر خاص اہمیت اختیار کر گئی ہے۔

یہ تصویر یقینی طور پر فروری 1952 سے قبل کی ہے اس میں ملکہ الزبتھ دوم نو عمری میں ہیں۔ ملکہ ان لوگوں کے ساتھ کھڑی ہیں جو اس طویل عرصے میں اس کے سب سے پیارے رہے اور پھر ملکہ سے پہلے ہی یکے بعد دیگرے دنیا سے رخصت ہوتے گئے۔

بائیں جانب سے ملکہ کے شوہر شہزادہ فلپ اور ان کے والد جارج ششم کھڑے ہیں۔ ان کی والدہ ملکہ الزبتھ اور ان کی بہن شہزادی مارگریٹ موجود ہیں۔ یہ وہ چار افراد ہیں دس روز میں ملکہ الزبتھ دوم کی قبر بھی ان چاروں کی آخری آرام گاہوں کے ساتھ بنائی جائے گی۔

ملکہ الزبتھ دوم کی آخری رسومات 18 ستمبر کو طے کی گئی ہیں۔ صبح گیارہ بجے بگ بینگ کی گھنٹی بجا کر ان کی آخری رسومات کے آعاز کا اعلان کیا جائے گا۔ العربیہ ڈاٹ نیٹ کو مقامی ذرائع ابلاغ سے معلوم ہوا ہے کہ ان کی تدفین کا فیصلہ کنگ جارج ششم چرچ کی لابی میں کرنے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔ یہ یادگار سینٹ جارج چرچ کا حصہ ہے۔ یہ لندن سے 36 کلومیٹر کے فاصلہ پر جنوبی انگلینڈ کے بارکشائر کے دیہی علاقوں میں ہے۔

ملکہ الزبتھ دوم کے شوہر شہزادہ فلپ جو گذشتہ برس 9 اپریل کو 99 سال کی عمر میں وفات پا گئے تھے، انہیں ابھی تک اس جگہ پر دفن نہیں کیا گیا۔ اب ان کی میت کو بھی اسی یادگار میں منتقل کیا جائے گا تاکہ میاں بیوی موت کے بعد بھی اکٹھے ہو جائیں۔

ملکہ کے والد کنگ جارج ششم کا 6 فروری 1952 کو 56 سال کی عمر میں کیسنر سے انتقال ہو گیا تھا۔ 9 فروری 2002 کو ان کی بیٹی شہزادی مارگریٹ نے 72 سال کی عمر میں دنیا سے پردہ کیا۔

ملکہ الزبتھ دوم کی والدہ ’’مادر ملکہ‘‘ نے 30 مارچ 2002 کو 101 سال کی عمر میں وفات پائی۔ ملکہ الزبتھ دوم کے شوہر شہزادہ فلپ 9 اپریل 2021 کو جہان فانی سے رخصت ہوئے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں