سعودی ویژن 2030

نیوم کالگژری جزیرہ سندالہ سرفہرست عالمی سیاحتی مقامات کا مقابلہ کرے گا!

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
7 منٹس read

نیوم کا نیا لگژری جزیرہ سندالہ اپنی سال بھر کی پُرتعیش پیش کشوں کے ساتھ موناکواورایتھنز جیسے سرفہرست عالمی سیاحتی مقامات کا مقابلہ کرنے کوتیار ہے۔

نیوم کے ہوٹل ڈویلپمنٹ ڈویژن کے ایگزیکٹوڈائریکٹر کرس نیومین نے جمعرات کوالعربیہ کو ایک خصوصی انٹرویو میں بتایا کہ سندالہ 2024 کے اوائل میں پہلے زائرین کا خیرمقدم کرے گا،یہ نیا لگژری سیاحتی مقام ایک متحرک ، عالمی معیار کے مرینا اور یاٹ کلب کا گھر ہوگا جو خود کو بین الاقوامی یاٹنگ سیزن میں ایک نئے منفرد مقام کے طور پر پیش کرے گا۔

نیومین نے کہا کہ ’’سندالہ نیوم کی پہلی مادی نمائش اور نیوم اور سعودی عرب کے سیاحتی شعبے دونوں کے لیے اہم لمحے کی نمائندگی کرتا ہے‘‘۔

انھوں نے بتایا کہ یہ جزیرہ یورپی کشتی مالکان کے لیے ایک اچھے مقام پر واقع ہے اورایتھنز، پورٹو سرو اورموناکو جیسے بہت سے موجودہ کشتیوں کے مقامات سے سوئزنہر کے ذریعے قابل رسائی ہے۔ علاقائی کشتیوں کے مالکان اور شوقین افراد کے لیے سندالہ الواجہ اورجدہ کے قریب واقع ہے اوراس کا درجہ حرارت عام طور پر جی سی سی خطے کے مقابلے میں 10 ڈگری ٹھنڈا ہوتا ہے۔

انھوں نے وضاحت کرتے ہوئے بتایاکہ ’’بحیرہ احمر کا ایک اہم گیٹ وے ، سندالہ جزیرہ قریباً 2،000 مختلف سمندری انواع اور آبی حیات کا گھر ہے ،ان میں سے بہت سے بحیرہ احمر کے لیے خاص ہیں اور دنیا میں کہیں اور نہیں مل سکتے ہیں۔جزیرے کے سمندری گھاس اوررنگین مرجان کی چٹانوں کے علاقے آبی جانوروں کی زندگی کی ایک وسیع اور حیرت انگیز صف کا گھر ہیں ، جس میں مانٹا شعاعیں شامل ہیں‘‘۔

’خوش حالی اور مہم جوئی‘

نیومین نے کہا کہ یہ توقع کی جاتی ہے کہ ’’یہ متجسس مسافروں اور خوش حالی اور مہم جوئی کے متلاشیوں کی ایک بین الاقوامی برادری کو اپنی طرف متوجہ کرے گا،جس میں یاٹ مالکان ، بوٹ چارٹرز اور سمندری شائقین شامل ہیں‘‘۔

انھوں نے کہا کہ ’’یہ جزیرہ ایک پُرتعیش منزل ہے جس میں سال بھر کی پیش کش پرکثیرالجہتی تجربات ہیں‘‘۔انھوں نے ایک ایونٹ کیلنڈر کا انکشاف کرتے ہوئے جو عظیم الشان کھیلوں کے واقعات، شاندار ثقافتی تقریبات، اور بہت سی دیگرسرگرمیوں سے بھرپور ہوگا۔اس میں مختلف طبقات کے لوگوں کو لطف اندوز کرنے کے لیے پیش کش کی جائے گی۔

انھوں نے انکشاف کیاکہ ’’گلیمر سیزن'، جو مارچ سے مئی، اور اکتوبر اور نومبر تک ہوتا ہے،یاٹنگ ایونٹ کے موسم کے ساتھ ملتا ہے اور مہمانوں کو کنسرٹ، فیشن اور تیوہاروں تک خصوصی رسائی سے لطف اندوز کرے گا‘‘۔

840،000 مربع میٹر میں پھیلا ہوا ، سندالہ جزیروں کے گروپ میں سے ایک ہے جنھیں نیوم میں تیار کیا جائے گا۔

سعودی عرب کے وزیراعظم اور ولی عہد شہزادہ محمد بن سلمان نے پیر کے روز اس منصوبے کی نقاب کشائی کی ، جس سے مملکت کے پہلے سے ہی تیزی سے بڑھتے ہوئے سیاحت کے شعبے کوایک نئی اٹھان ملی ہے۔

نیومین سے جب پوچھا گیا کہ وہ اس نئی پُرتعیش منزل کے بارے میں سب سے زیادہ کیا انتظار کر رہے ہیں توانھوں نے کہا کہ وہ ’’یہ ظاہر کرنے کا موقع ملنے کے بارے میں پُرجوش ہیں کہ ہم کس طرح فطرت کے ساتھ ہم آہنگی میں رہ سکتے ہیں ، اپنے سیارے کو مستقبل کی نسلوں کے لیے محفوظ رکھ سکتے ہیں،جبکہ ایک ہی وقت میں ٹیکنالوجی اور شہری ترقی کے شعبوں میں بڑی چھلانگیں لگا رہے ہیں۔

ان کا کہنا تھا کہ نیوم ایک ایسا خطہ ہے جو خواب دیکھنے والوں اورتعبیرپانے والوں کے ذریعہ شروع سے ڈیزائن کیا جارہا ہے-دنیا کے کچھ انتہائی باصلاحیت اور متنوع ذہنوں کے ساتھ کام کرنا ناقابل یقین ہے جو ایسے کام کرنے کی کوشش کررہے ہیں جو پہلے کبھی نہیں کیے گئے ہیں۔ یہ ایک ایسے وقت میں آرہا ہے جب دنیا ہمارے سامنے اہم عالمی چیلنجوں پر قابوپانے کی کوشش کررہے کہ اور اس کو اس مقصد کے لیے ایک نئی سوچ اور نئے حل کی ضرورت ہے۔

جزیرہ میں مہمانوں کی اقامت گاہیں

نیوم کی انتظامیہ سندالہ میں 413 الٹرا پریمیم کمروں کی تعمیر کا ارادہ رکھتی ہے۔ان میں 88 ولا اور333 اعلیٰ خدمات کے حامل اپارٹمنٹس شامل ہیں۔

جدید آرکیٹیکچرل ڈیزائن میں سب سے آگے،سندالہ کی سانس لینے والی جمالیات کوعالمی معیار کے معماروں نے ڈیزائن کیا ہے، جیسے لوکا دینی ڈیزائن اور آرکیٹیکچر۔ ڈیزائن یقینی طور پر جمالیات اور زائرین کے تجربے کے لحاظ سے مستقبل پرنظر رکھتے ہوئے قدرتی زمین کی تزئین وآرائش کو مکمل کرے گا۔

یہ ایک یاٹ کلب اور ایک مرینا پیش کرے گا جو 50 میٹر اور 75 میٹر تک یاٹس کے لیے 86 برتھوں سے لیس ہوگا ، اور 180 میٹر تک کے سپریاٹس کے لیے خدمات مہیا کرے گا۔

نیومین نے کہا:’’یاٹ کلب اور مرینا کو عیش و آرام کے دلدادہ مالکان اور آپریٹرز کی خدمت اور تجربے میں ایک نیا معیار قائم کرنے کے لیے ڈیزائن کیا گیا ہے‘‘۔

انھوں نے وضاحت کی کہ یہ جزیرہ نیوم بے ہوائی اڈے اور نیوم مین لینڈ سے کشتی ، فیری اور سمندری جہاز کے ذریعہ قابل رسائی ہوگا۔سندالہ کو نہرسوئز کے ذریعے بحیرۂ روم سے کشتی کے ذریعہ آسانی سے پہنچایاجاسکتا ہے،جومسافروں کے لیے سال بھر کی رسائی اور موسم سرماکے لیے مثالی مقام فراہم کرتا ہے۔

ان تمام پیش کشوں کے علاوہ، مہمان جزیرے پر اعلیٰ کے آخرمیں خوردہ اورکھانے اورمشروبات کے تجربات سے بھی لطف اندوز ہو سکیں گے جو 38 دکانوں کورکھنے کے لیے مقررکیا گیا ہے۔

سعودی ویژن 2030

سعودی ویژن 2030 کے تحت مملکت میں بہت سی اصلاحات کا مشاہدہ جاری ہے۔یہ وسیع تر معاشی اورمعاشرتی اصلاحات کا بلیو پرنٹ ہے جو ولی عہد نے 2016 میں شروع کیا تھا۔

اس ویژن نے سعودی عرب کے سیاحتی شعبے کی بحالی پر زور دیا ہے، جسے قیادت کی طرف سے بہت زیادہ ترجیح دی گئی ہے۔نیومین نے کہا کہ نیوم کے ہوٹل ڈویلپمنٹ ڈویژن نے اس پہلو میں بہت زیادہ حصہ لیا ہے،جبکہ معاشی فروغ بھی پیش کرتا ہے۔

انھوں نے مزیدکہا کہ نیوم کا مقصد 2030 تک 70 لاکھ زائرین کی میزبانی کرنا ہے۔عالمی معیارکے سیاحتی شعبے کے قیام میں اپنی شراکت کے ذریعے، نیوم ہوٹل ڈویلپمنٹ ایک اقتصادی انجن کے طور پر نیوم کی ترقی میں اہم ثابت ہوگا، جو سعودی وژن 2030 کے تنوع کے اہداف کو فروغ دے گا‘‘۔

توقع ہے کہ صرف سندالہ میں سیاحت ، مہمان نوازی اورتفریحی خدمات کے شعبوں میں قریباً 3،500 ملازمتیں پیدا ہوں گی۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں

  • مطالعہ موڈ چلائیں
    100% Font Size