شہزادہ محمد بن سلمان ایوارڈ سعودی چینی ثقافتی تعاون کی علامت

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

سعودی وزیر ثقافت شہزادہ بدر بن عبداللہ بن فرحان آل سعود نے اپنے ٹوئٹر اکاؤنٹ کے ذریعے انکشاف کیا کہ سعودی عرب اور چین کے درمیان ثقافتی تعاون کے لیے شہزادہ محمد بن سلمان ایوارڈ دونوں ممالک کے ممتاز افراد، لسانی اور تخلیقی ماہرین کو اعزاز سے نوازے گا۔

اس ایوارڈ کا اعلان ولی عہد شہزادہ محمد بن سلمان کے 2019 میں دورہ چین کے دوران کیا گیا تھا۔ بیجنگ یونیورسٹی میں کنگ عبدالعزیز پبلک لائبریری کی برانچ میں ہونے والی اس تقریب میں اس وقت سعودی وزیر ثقافت بھی موجود تھے۔

ایوارڈ کا مقصد چین کی یونیورسٹیوں میں عربی زبان پڑھانے والے ممتاز طلبا کی مدد کرنا، چین اور عربی زبانوں کے درمیان ترجمہ کی حمایت کرنا اور علم کی خدمت کرنا بھی تھا۔

تعلقات کو مستحکم کرنا

یہ ایوارڈ سعودی ’’وژن 2030‘‘ اور چین کے ’’بیلٹ اینڈ روڈ اقدام‘‘کے مطابق مشترکہ ثقافتی منصوبوں کی تکمیل کے لیے سعودی حکام کے گہرے یقین کا بھی اظہار ہے۔

شہزادہ محمد بن سلمان خلیجی سمٹ کے موقع پر۔تصویر واس
شہزادہ محمد بن سلمان خلیجی سمٹ کے موقع پر۔تصویر واس

ثقافتی اور علمی تبادلے کو مستحکم کرنے کے مطلوبہ اہداف کے حصول کے لیے نتائج کا جائزہ لیا جاتا ہے اور کامیابیوں کی پیمائش کی جاتی ہے۔

’’شہزادہ محمد بن سلمان ایوارڈ‘‘ سعودی عرب اور عوامی جمہوریہ چین کے درمیان ثقافتی تعاون کے لیے ثقافتی گہرائی کی تشکیل اور رابطے میں توسیع کرتا ہے۔

ایوارڈ کی 4 کیٹیگریز

اس ایوارڈ کے تحت دونوں ممالک کی کامیابیوں کو 4 شاخوں میں منایا جاتا ہے۔ پہلی کیٹگری ثقافتی شعبوں میں تحقیق اور مطالعہ کی ہے۔ دوسری کیٹگری میں فنی اور تخلیقی کام ہیں، تیسری کیٹگری میں چینی اور عربی زبانوں میں ترجمہ پر توجہ ہے اور چوتھی کیٹگری میں دونوں ملکوں کی جانب سے ثقافت اور علم میں کوشش کرنے والی ثقافتی شخصیت کی حوصلہ افزائی کی جاتی ہے۔ پہلی تینوں کیٹگریز کو نوجوانوں کے لئے مختص کیا گیا ہے۔

فاتح کو تعریفی سند سے نوازا جائے گا جس میں ایوارڈ جیتنے کی وجوہات مذکور ہوں گی۔ 375 ہزار سعودی ریال کی رقم اور ایک یادگاری تمغہ بھی دیا جائے گا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں