دماغی سرجری اور اس کی صحت کی حفاظت کے لیے ماہرین کی پانچ مفید تجاویز

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
5 منٹس read

طرز زندگی میں کچھ تبدیلیاں لا کر انسان کامیاب ہوسکتا ہے، مثال کے طور پر میٹابولک سنڈروم جو امراض کا مجموعہ ہےپر قابو پا کرانسانی زندگی بہتر ہوسکتی ہے۔ یہ سینڈروم امراض قلب اور ذیابیطس کا خطرہ بڑھادیتا ہے۔

امریکی ’سی این بی سی‘ نیٹ ورک کی طرف سے شائع کردہ اور ہارورڈ میڈیکل سکول کے سائیکاٹری کے پروفیسر اور کتاب "برین انرجی ": : دماغی صحت کو سمجھنے میں ایک انقلابی پیش رفت،"کے مصنف کرسٹوفر پامر کی تیار کردہ ایک رپورٹ کے مطابق صرف چند مہینوں میں ایک شخص اپنی زندگی کو تیز، توانا اور صحت مند بنا سکتا ہے۔ مصنف بہ طور معالج کام کرتے ہیں۔ ماہر نفسیات اور نیورو سائنس کے محقق 27 سال سے زیادہ عرصے کا تجربہ رکھتے ہیں۔ اس دوران انہوں نے دماغی اور جسمانی صحت اور دماغی صحت کے درمیان حیران کن روابط کا مطالعہ کرنے پر توجہ دی۔

رپورٹ میں پروفیسر پامر نے بیس کی دہائی سے لے کر اپنے ذاتی تجربے کا جائزہ لیا اور 5 بنیادی نکات کی نشاندہی کی جن سے اچھی صحت، قوتِ حیات اور تیز دماغ سے لطف اندوز ہونے کے لیے پرہیز کرنا چاہیے۔

1. زیادہ کاربوہائیڈریٹ والی غذاؤں سے پرہیز کریں

غذا موٹاپے، ذیابیطس اور دل کی صحت میں اہم کردار ادا کرتی ہے، لیکن بہت سے لوگوں کو یہ احساس نہیں ہے کہ اس کے دماغ پر بھی گہرے اثرات مرتب ہوتے ہیں۔ میٹابولک سنڈروم کو کم کاربوہائیڈریٹ والی غذا پر قائم رہنے سے ٹھیک کیا جا سکتا ہے۔ کم کارب غذا اناج، سینکا ہوا سامان، مٹھائیاں اور پھلوں اورچینی یا نشاستہ زیادہ ہوتا ہے۔

انڈے کو ناشتے میں کھایا جا سکتا ہے اور دن بھر سبزیاں، پھل اور اچھی خاصی مقدار میں گوشت، مچھلی اور مرغی کھائی جا سکتی ہے۔

2. ہفتے میں 5 دن کھیل کود کرنا

1.2 ملین امریکیوں کے مطالعے سے معلوم ہوا ہے کہ ورزش دماغی صحت کے لیے اچھی ہے۔ ماہرین ہفتے میں تین سے پانچ بار 45 منٹ کی ورزش کا مشورہ دیتے ہیں۔ اسٹریچنگ اور بنیادی مشقوں کے علاوہ وزن اٹھانا، دوڑنا، تیز چلنا یا تیراکی کو ترجیح دی جاتی ہے۔

3. رات میں 7 گھنٹے سونا

کم نیند ادراک کی خرابی کا باعث بن سکتی ہے جو وقت کے ساتھ ساتھ الزائمر کی بیماری کا خطرہ بڑھا سکتی ہے۔ یہ مزاج کو بھی متاثر کر سکتا ہے اور ڈپریشن میں حصہ ڈال سکتا ہے۔

جب انسان سوتا ہے تو اس کا جسم "آرام اور مرمت" کی حالت میں چلا جاتا ہے۔ دماغ نیورونز میں بہت سی تبدیلیوں سے گزرتا ہے جو سیکھنے اور یادداشت کے استحکام میں کردار ادا کرتی ہیں۔ پروفیسر پالمر خبردار کرتے ہیں کہ نیند کی کمی سے خلیات پر منفی اثرات مرتب ہوتے ہیں اور وہ خرابی کا شکار ہونے لگتے ہیں۔

پروفیسر پامر بتاتے ہیں کہ جسم کو جس قدر نیند کی ضرورت ہوتی ہے وہ ہر شخص کے لیے مختلف ہوتی ہے، لیکن یہ مناسب ہے کہ رات میں کم از کم سات گھنٹے، شام آٹھ یا نو بجے سے صبح چار بجے تک سوئیں۔

4. خود ترقی کی تکمیل

نفسیاتی علاج کے ذریعے جذباتی صحت کی تلاش ایک شخص کی زندگی کو بدل سکتی ہے، کیونکہ اس سے اسے اپنے آپ کو اور زندگی میں اپنے مقاصد کو سمجھنے میں مدد ملتی ہے، جو اسے حاصل کرنے کے لیے حوصلہ افزائی کرے گا۔

نفسیاتی علاج جو ہمدردی، تعلقات یا سماجی مہارتوں پر توجہ مرکوز کرتا ہے، یا علمی صلاحیتوں کو بہتر بناتا ہے غیر فعال دماغی سرکٹس کو مضبوط بنا سکتا ہے۔

5. اہداف کے حصول کے لیے استقامت

انسان فطری طور پر محسوس کرنے اور مقاصد حاصل کرنے کی خواہش کی طرف مائل ہوتے ہیں۔ جب کچھ لوگوں میں مقصد کے احساس کی کمی ہوتی ہے، تو یہ ایک دائمی تناؤ کے ردعمل کا سبب بن سکتا ہے اور علمی فعل میں خرابی کا باعث بن سکتا ہے۔

یہ یاد رکھنا چاہیے کہ اہداف کثیر جہتی ہوتے ہیں، کیونکہ ان میں دوسرے لوگوں، اپنے آپ اور آس پاس کی کمیونٹی کے ساتھ تعلقات شامل ہوتے ہیں۔ ہر ایک کو معاشرے میں کم از کم ایک کردار کا مقصد ہونا چاہیئے جو انہیں اپنا حصہ ڈالنے اور قابل قدر محسوس کرنے کی اجازت دیتا ہے۔ کردار اتنا ہی آسان ہو سکتا ہے جتنا گھر کا کام کرنا، رضاکارانہ نگہداشت کا کام کرنا یا طالب علم یا ملازم کا کردار۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں