حیران کن جڑواں بچوں کی پیدائش، ایک کے پیٹ میں دوسرا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

تیونس کے دارالحکومت کے ایک ہسپتال میں بدھ کے روز اس وقت ایک عجیب و غریب واقعہ پیش آگیا جب ایک بچے کی پیدائش اس طرح ہوئی کہ اس کے پیٹ میں اس کا جڑواں بھائی بھی موجود تھا۔ پہلی مرتبہ تیونس میں ایسا واقعہ سامنے آیا۔ ماہرین نے اس بات کی تصدیق کی ہے کہ یہ عالمی سطح پر بھی ایک نادر کیس ہے۔

پیڈیاٹرک سرجری کے ماہر ڈاکٹر وسام میکنی نے مقامی ریڈیو کو دیے گئے اپنے بیانات میں وضاحت کی کہ تیونس میں پہلی مرتبہ ایک بہت ہی نایاب کیس ریکارڈ کیا گیا ہے جس میں بچے کے پیٹ میں جڑواں بھائی کی پیدائش ہوتی ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ بچے کی پیدائش 30 جنوری کو دارالحکومت کے ایک نجی کلینک میں ہوئی تھی۔ ماں کی حالت سے نمٹنے والے ڈاکٹروں نے اشارہ کیا کہ وہ حمل کے پہلے مہینوں میں امیجنگ کے بعد یقین کیا کہ جنین کے پیٹ میں ایک تھیلا ہے۔ تاہم، جیسے جیسے حمل بڑھتا گیا تصاویر میں جنین کے پیٹ میں ریڑھ کی ہڈی اور ٹانگوں کی ہڈیوں کی موجودگی ظاہر ہوئی۔ اس بات کی تصدیق کرنے کے لیے کہ وہ اپنے جڑواں بھائی کو پیٹ کے اندر لے جا رہا ہے۔

آج جمعرات کو نومولود کے پیٹ کے اندر مردہ جنین کو نکالنے کے لیے اس کا آپریشن ہونا ہے۔ ماہرین نے وضاحت کی ہے کہ اس آپریشن سے زندہ نومولود کی زندگی کو "کوئی خطرہ نہیں"۔ ڈاکٹروں نے والدہ کو بتایا کہ ان کے جڑواں بچے ہیں جن میں سے ایک اپنے بھائی کے پیٹ میں ہے۔ یہ ایسی حالت ہے جو شاذو نادر ہی وقوع پذیر ہوتی ہے۔ تیونس کے ڈاکٹر نے بتایا کہ دوسرے جنین کی پرورش اپنے بھائی کے بائیں گردے کے ذریعے ہوئی تھی اور اس کا دل حمل کے اٹھارویں ہفتے تک دھڑکتا رہا۔ اس سے پہلے کہ اس کے دل کی دھڑکن رک گئی اور وہ مر گیا۔ یاد رہے سول سوسائٹی کے شعبے میں سرگرم انجمنوں میں سے ایک نے سرجری کے اخراجات فراہم کرنے کا وعدہ کیا تھا۔ ایسی پیدائش انتہائی نادر ہوتی ہے اور ہر ملین پیدائشوں میں سے ایسا ایک کیس سامنے آنے کا امکان ہوتا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں

  • مطالعہ موڈ چلائیں
    100% Font Size