خواتین خبردار ہوجائیں.. نیل پالش ذیابیطس کا باعث بن سکتی ہے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

ایک نئی تحقیق میں یہ بات سامنے آئی ہے کہ خواتین کی روزمرہ استعمال ہونے والی میک اپ کی مصنوعات میں مضرصحت کیمائی مادہ فتھالیٹس پایا جاتا ہے جو ذیابیطس ٹائپ ٹو سمیت سنگین بیماریوں کا باعث بن سکتا ہے۔

تحقیق کے مطابق فتھالیٹس زہریلے کیمیائی مواد کی ایک قسم ہے جو ہیئر اسپرے اور آفٹر شیو جیسی متعدد دیگر مصنوعات میں پائے جاتے ہیں، یہ جلد میں داخل ہو کر جگر، گردوں، پھیپھڑوں اور دیگر اعضاء کو نقصان پہنچا سکتے ہیں، اور اس کے استعمال سے خواتین میں ٹائپ 2 ذیابیطس لاحق ہونے کے واقعات میں 63 فیصد اضافہ دیکھا گیا ہے۔

فتھالیٹس کا لمیبے عرصے تک استعمال سے بانجھ پن، ذیابیطس اور دیگر اینڈوکرائن عوارض کا خطرہ بھی بڑھ جاتا ہے۔

فتھالیٹس پلاسٹک کی پائیداری بڑھانے کے لیے استعمال ہونے والے کیمیکل ہیں جیسے ذاتی نگہداشت کی مصنوعات کے علاوہ اور خوراک اور مشروبات کی پیکیجنگ کھلونوں میں بھی بڑے پیمانے پر استعمال کیا جارہا ہے۔

اینڈو کرائن سوسائٹی آف کلینیکل اینڈو کرائنولوجی اینڈ میٹابولزم جرنل میں شائع ہونے والی اس تحقیق میں تجویز کیا گیا ہے کہ روز مرہ استعمال کی مصنوعات جیسے نیل پالش، شیمپو اور پرفیوم میں اس کیمیائی مواد کی موجودگی کی جانچ کے لیے معائنہ ہونا چاہیے۔

یونیورسٹی آف مشی گن سکول آف پبلک ہیلتھ سے تعلق رکھنے والی ماہر صحت عامہ سنگ کیون پارک کا کہا کہ چھ سال تک مضر صحت کیمیکل کے استعمال سے خواتین ، خصوصا سفید فام خواتین میں ذیابیطس میں اضافہ دیکھا گیا ہے۔

ایک تحقیق کے مطابق سفید فام خواتین میں ایشیائی اور افریقی خواتین کی نسبت ذیابیطس سے متاثر ہونے کے امکانات 30-63 فیصد زیادہ ہوتے ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں