ترکیہ زلزلہ

زلزلے سے متاثرہ ترکیہ اور شام کے لیے امداد کے نام پر دھوکہ بازوں کی لوٹ مار!

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
7 منٹس read

ایک رپورٹ میں انکشاف کیا گیا ہے کہ ترکی اور شام میں زلزلہ متاثرین کے لیے امداد کے نام پر بڑے پیمانے پر دھوکہ باز سوشل میڈیا پر لوگوں کو لوٹ رہے ہیں۔

زلزلے میں جنوبی ترکی اور شمالی شام میں 41،000 سے زیادہ افراد ہلاک ہوچکے ہیں، ہزاروں زخمی اور بے گھر ہوئے ہیں۔

شعبدہ باز مقبول سوشل میڈیا پلیٹ فارمز جیسے ٹک ٹوک اور ٹوئٹر پر زلزلے کے مناظر پر مبنی جذباتی ویڈیوز اور ہیش ٹیگز مثلا - 'ترکی کے لئے دعا کریں'، اور 'زلزلے سے متاثرہ افراد کے لئے عطیہ کریں' کے ذریعے لوگو ں کو متوجہ کرتے ہیں۔

تاہم بی بی سی اور بلپنگ کمپیوٹر نامی سائبر سکیورٹی پر کام کرنے والی خبر رساں ویب سائٹ کی ایک مشترکہ رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ یہ تصاویر اور ویڈیوز حقیقت پر مبنی یا حالیہ زلزلے سے متعلق نہیں ہں۔ دھوکے باز امداد کے نام پر رقم لے کر اپنے اکاؤنٹس بھر رہے ہیں۔

ان رپورٹس میں آن لائن فراڈ کو متعدد مثالوں سے ثابت کیا گیا ہے۔

ایک ویڈیو میں ہلکی نیلی ٹوپی پہنے بچے کو دکھایا گیا ہے جو دھماکے کے باعث خوف اور پریشانی سے بھاگ رہا ہے۔ لائیو سٹریم کے میزبان نے پیغام لکھا: ’براہ کرم اس مقصد کو حاصل کرنے میں ہماری مدد کریں۔‘

یہ ٹک ٹاک گفٹ کے لیے ایک واضح درخواست ہے تاہم اس بچے کی تصویر حالیہ زلزلے کی نہیں۔

تحقیق کے لیے جب اس تصویر کو ریورس امیج سے سرچ کیا گیا تو معلوم ہوا کہ یہی تصویر اس سے قبل 2018 میں ٹوئٹر پر پوسٹ کی جا چکی ہے اور اس پر(شام کے شہر آفرین میں جنگ کے اثرات کے حوالے سے) عنوان لکھا گیا تھا ’آفرین میں نسل کشی بند کرو۔‘

دھوکے باز ٹویٹر کو بھی جذباتی پیغامات شیئر کرنے کے لئے استعمال کر رہے ہیں اور ساتھ ہی صارفین سے چندہ طلب کرنے کے لئے کرپٹوکرنسی کے لنکس دیتے ہیں۔ عموما یہ ظاہر کرتے ہیں کہ وہ ترکیہ یا شام میں موجود ہیں تاہم ان کی شناخت کسی غلطی یا غلط ہجے استعمال کرنے سے بھی ہو سکتی ہے۔

رپورٹ کے مطابق ایک ایسے ہی اکاؤنٹ سے فائر فائٹر کی ایک تصویر بار بار شیئر کی گئی، جس نے ایک چھوٹے بچے کو منہدم ہوتی عمارتوں کے درمیان سے ریسکیو کیا تھا۔ اس تصویر کو 12 گھنٹوں میں 8 بار پوسٹ کیا گیا تھا تاہم اس اکاونٹ سے استعمال کی جانے والی یہ تصویر حقیقی نہیں ہے۔

ایک یونانی اخبار ’او ای ایم اے‘ نے رپورٹ کیا ہے کہ اس تصویر کو ایجیئن فائر بریگیڈ کے میجر جنرل پیناگیوتیس کوٹریڈیس نے مصنوعی ذہانت کے سافٹ ویئر مڈ جرنی کی مدد سے بنایا تھا۔

اے آئی امیج بنانے والے اکثر غلطیاں کر جاتے ہیں۔ اس تصویر میں بھی دیکھا جا سکتا ہے کہ اس فائر فائٹر کے دائیں ہاتھ پر چھ ہندسے موجود ہیں۔

اس رپورٹ میں لوگوں کے ٹویٹر پر جعلی فنڈ ریزنگ اکاؤنٹس بنانے اور پے پال فنڈ ریزنگ پیج پر لنک پوسٹ کرنے کی دوسری مثالیں بھی دی گئی ہیں۔

’اس کی ایک مثال ترکی ریلیف نام کا اکاؤنٹ ہے۔ یہ اکاونٹ ٹوئٹر پر جنوری میں بنایا گیا اور اس کے محض 31 فالوورز ہیں اور اس پر پے پال کے ذریعے عطیات لیے جا رہے ہیں۔ اکاونٹ نے 20000 کا ہدف مقرر کیا تھا تاہم اس پے پال اکاؤنٹ کو بند کیے جانے تک 900 امریکی ڈالر کے عطیات موصول ہو چکے تھے۔

جعلی ٹوئٹر اکائونٹ کی ایک تصویر۔
جعلی ٹوئٹر اکائونٹ کی ایک تصویر۔

بی بی سی نے کہا کہ یہ حالیہ دنوں میں پے پال پر فنڈ جمع کرنے کے لیے شروع کیے گئے 100 سے زیادہ اکاؤنٹس میں سے ایک ہے، جو زلزلہ متاثرین کی مدد کے لیے عطیات مانگ رہے ہیں، جن میں سے بعض جعلی ہیں۔

پے پال نے ایک بیان میں کہا ہے کہ "پے پال ٹیمیں ہمیشہ اکاؤنٹس کی جانچ پڑتال اور پابندی کے لئے پوری تندہی سے کام کرتی رہتی ہیں، خاص طور پر ترکی اور شام میں زلزلے جیسی آفات کے تناظر میں ، تاکہ عطیات متاثرین تک پہنچ کر انہی مقاصد میں استعمال ہو، جن کے لیے لوگوں نے امداد کی۔"

ٹک ٹاک کا کہنا ہے کہ ’ہم ترکی اور شام میں آنے والے تباہ کن زلزلوں پر بہت افسردہ ہیں اور زلزلہ متاثرین کی امدادی سرگرمیوں میں مدد فراہم کر رہے ہیں۔ ہم عطیہ دہندگان کو دھوکے اورگمراہ کن عناصر سے روکنے کے لیے بھی متحرک ہیں تاکہ وہ بنا خوف مدد کر سکیں۔‘

عطیات دینے کے قانونی طریقے

متحدہ عرب امارات میں ، قانونی طور پر عطیہ کرنے کے متعدد طریقے ہیں۔

امارات ریڈ کریسنٹ کے تحت "برجز آف گڈ" مہم ہے جہاں زلزلہ متاثرین کے لئے ریلیف بکس پیک کرنے میں مدد کے لئے رضاکاروں کی ضرورت ہوتی ہے۔

تجویز کردہ عطیہ کی اشیاء میں موسم سرما کے کپڑے، کمبل، کھانے کے ڈبے، بچے کی خوراک ، اور ذاتی حفظان صحت کی اشیاء شامل ہیں جن میں ڈایپر اور سینیٹری پیڈ شامل ہیں۔

دبئی میں ترکیہ کے قونصل خانے میں بھی امدادی مرکز کام کر رہا ہے۔

ابو ظہبی میں ترکیہ کے سفارت خانے نے ترکیہ اور شام میں فوری طور پر درکار سامان عطیہ کرنے کے لئے ایک چندہ مہم شروع کی ہے۔ جو لوگ اشیاء عطیہ کرنا چاہتے ہیں وہ انہیں براہ راست سی ایس ایس ہوم وارڈ باؤنڈ ٹرانسپورٹیشن کمپنی کے گودام میں دے سکتے ہیں۔

بین الاقوامی امداد کی کوششیں

بین الاقوامی سطح پر، پوری دنیا میں بین الاقوامی اور مقامی انسانی ہمدردی کی تنظیموں کے ذریعے عطیات دیے جا سکتے ہیں۔
ان میں سے، یونیسف سرچ اور ریسکیو ورک، انخلا کو مربوط کرنے ، اور حفظان صحت کٹس ، کمبل اور گرم لباس تقسیم کرنے میں فوری مدد فراہم کرنے کے لئے کام کر رہا ہے۔

عطیات کے لئے ایک آن لائن اپیل میں کہا گیا ہے کہ " انفراسٹرکچر کی تباہی کے بعد اب آنے والے آفٹر شاکس میں زخمی یا ہلاک ہونے کا خطرہ ہے لہذا فوری طور پرخیمے، پینے کا محفوظ پانی اور حفظان صحت سے متعلق ضروری سامان کی ضرورت ہے۔"

ڈاکٹرز ود آوٹ بارڈرز - ایک بین الاقوامی تنظیم جو مختلف ضرورت مند ممالک کو طبی امداد مہیا کرتی ہے - ترکی میں متعلقہ اسپتالوں میں متاثرین کا علاج کر رہی ہے اور ہنگامی میڈیکل کٹس عطیہ کرتی ہے۔ اس نے لوگوں کو بھی اپنی ویب سائٹ کے ذریعے عطیہ کرنے کی اپیل کی ہے۔

کیئر انٹرنیشنل ، ایک انسانی ہمدردی کی تنظیم جو ترکیہ اور شام میں موجود ہے ، نے بھی ہنگامی امداد دینے کی تاکید کی ہے جس میں کھانا ، شیلٹر ، حفظان صحت کٹس ، سرد موسم کی کپڑے اور نقد امداد شامل ہے۔

شام اور ترکیہ میں موجود ریڈ کریسنٹ تنظیم نے لوگوں سے کہا ہے کہ وہ ابتدائی طبی امداد میں بچوں کے لیے کمبل اور کپڑے عطیہ کریں۔

اپیل میں کہا گیا ہے کہ بسکٹ ، روٹی ، آٹا ، تیار کھانے ، پاستا ، چاول ، دودھ اور بچے کے فارمولے سمیت اشیاء کی فوری ضرورت ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں