ریٹائرمنٹ سے قبل سعودی نے بیٹے کو بھی غلاف کعبہ کی بُنائی کے قابل بنا دیا

ابراہیم نوفل غلاف کعبہ بنانے میں اپنی مہارت اور تجربہ اپنے بیٹے کو منتقل کرنے کے خواہاں تھے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
1 منٹ read

ایک سعودی شہری نے ریٹائرمنٹ سے قبل اپنے بیٹے کو بھی غلاف کعبہ کی بُنائی میں کیرئیر بنانے کے قابل بنا دیا۔

’’العربیہ‘‘ کے ساتھ بات چیت میں نوفل نے بتایا کہ اس نے اپنے والد سے یہ پیشہ ورثے میں ملنے کے بعد 40 سال تک ریشم اور سنہری دھاگوں کے ساتھ گہرا تعلق قائم کیا تھا اور وہ اپنا فن اور مہارت اپنے بیٹے عمر کو منتقل کرنے کا خواہش مند تھا تاکہ میرے بعد بھی یہ پیشہ ہماری نسل میں چلتا رہے۔

اس بابرکت اور مقدس پیشے میں بیٹے نے بھی اپنے والد اور داد کی طرح کام کرنے کی خواہش کا اظہار کیا اور کہا کہ گزشتہ برس میں نے خانہ کعبہ کو نیا غلاف کعبہ پہنانے کے عمل میں حصہ لینے کے لیے اسے دیکھا تھا۔

غلاف کعبہ کے سالانہ کام کو پورا کرنے کے لیے کنگ عبدالعزیز کمپلیکس سینکڑوں ملازمتیں فراہم کرتا ہے۔ غلاف کعبہ سے متعلق امور پر ہر سال 20 ملین ریال سے زیادہ کی لاگت آتی ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں