سعودی فرمانروا شاہ سلمان کی قرآن مجید کی بے حرمتی کے واقعات کی شدید مذمت

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

سعودی عرب کے فرمانروا شاہ سلمان بن عبدالعزیز نے کوپن ہیگن میں ہوئے قرآن کی بے حرمتی کے واقعات کی شدید مذمت کی اور اسلام مخالف مذموم کاروائی قرار دیا۔

وہ منگل کے روز کابینہ کے اجلاس کے دوران اسلام کی مقدس کتاب قرآن مجید کو نذرآتش کیے جانے کے واقعات کے بارے میں بات کر رہے تھے۔

سعودی کابینہ نے بھی قرآن پاک کی بے حرمتی کی کوششوں کی مذمت کی اور بات چیت، رواداری اور احترام کی اقدار کو مستحکم کرنے اور نفرت اور انتہا پسندی کو پھیلانے والے ہر عمل کو مسترد کرنے کی ضرورت پر زور دیا۔

کوپن ہیگن میں ایک انفرادی احتجاجی مظاہرے میں، اسلام مخالف کارکن نے جمعہ کو ایک مسجد اور ترک سفارت خانے کے سامنے قرآن مجید کے دو نسخے نذر آتش کر دیے اور سویڈن کو نیٹو میں شامل کرنے تک ہر جمعہ کو یہ عمل جاری رکھنے کا عزم کیا۔

اس سے قبل ڈینش اور سویڈش شہریت رکھنے والے ایک انتہائی دائیں بازو کےسیاست دان نے 21 جنوری کو سویڈن میں قرآن کا نسخہ نذر آتش کر کے عالم اسلام کو مشتعل کر دیا تھا۔

سعودی کابینہ نے سعودی عرب کے ولی عہد شہزادہ محمد بن سلمان اور فرانسیسی صدر ایمانوئل میکرون، عراقی وزیر اعظم محمد شیعہ السوڈانی اور چین کے صدر شی جن پنگ کے درمیان ہونے والی ٹیلیفونک گفتگو کی تفصیلات بھی پیش کیں۔بات چیت کا محور تعلقات، شراکت داری کے شعبوں اور مملکت سعودی عرب کے ساتھ تعاون کو مضبوط بنانے کے مواقع پر تھا۔

سیشن کے بعد ایس پی اے کو ایک بیان میں، وزیر اطلاعات سلمان بن یوسف الدوسری نے کہا کہ کابینہ میں خلیج تعاون کونسل کی وزارتی کونسل کے 155 ویں اجلاس کے نتائج کا جائزہ لینے کے علاوہ جوہری توانائی کے معاملات، سعودی عرب کو شنگھائی تعاون تنظیم میں ڈائیلاگ پارٹنر کا درجہ دینا اور دیگر اہم امور بھی شامل تھے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں