خلا سے صحرائے صحارا میں ریت کے طوفان کا منظر اماراتی خلاباز نے کیمرے میں محفوظ کر لیا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size

بین الاقوامی خلائی اسٹیشن پر موجود متحدہ عرب امارات کے خلاباز سلطان النیادی نے افریقہ کے عظیم صحرائے صحارا میں ریت کے طوفان کی خلا سے لی گئی ناقابل یقین تصاویر بھیجی ہیں۔

النیادی اس وقت عرب دنیا کی تاریخ کے طویل ترین خلائی مشن کے لیے بین الاقوامی خلائی اسٹیشن (آئی ایس ایس) پر موجود ہیں۔

’’دلکش نظاروں کو کیمرے میں محفوظ کرنا میری خلائی سٹیشن پر پسندیدہ سرگرمی ہے‘‘: ٹوئٹر
’’دلکش نظاروں کو کیمرے میں محفوظ کرنا میری خلائی سٹیشن پر پسندیدہ سرگرمی ہے‘‘: ٹوئٹر

وہ 2 مارچ کو فلوریڈا میں ناسا کے کینیڈی اسپیس سنٹر سے چھ ماہ دورانیے کے سائنسی مشن کے لیے خلا میں پہنچے تھے۔ اس دوران وہ خلا میں انسانی خلیوں کی نشو ونما کے مشاہدے سے لے کر مائکرو گرویٹی میں آتش گیر مواد کو کنٹرول کرنے کے تجربات کریں گے۔

متحدہ عرب امارات کے خلاباز نے جمعرات کو شمالی افریقہ کے صحرا میں ریت کے طوفان کی دلکش تصاویر اپنے ٹویٹر اکاؤنٹ پر شیئر کیں۔ ان تصاویر کے ساتھ النیادی نے اپنے پیغام میں لکھا۔

شاندار صحرائے صحارا میں پھیلا ہوا ریت کا طوفان: ٹوئٹر فوٹو النیادی
شاندار صحرائے صحارا میں پھیلا ہوا ریت کا طوفان: ٹوئٹر فوٹو النیادی

"بہت دور سے، مجھے اپنے سیارے کی خوبصورتی مسلسل یاد آتی ہے۔ بین الاقوامی خلائی سٹیشن پر میری پسندیدہ سرگرمیوں میں سے ایک زمین کا مشاہدے کرنا، اور ان دلکش نظاروں کو کیمرے میں محفوظ کرنا ہے جو صرف خلا سے ہی دیکھے جا سکتے ہیں،"

انہوں نے کہا کہ "مجھے اس حالیہ تصویر کو شیئر کرتے ہوئے خوشی ہو رہی ہے جو کہ شاندار صحرائے صحارا میں پھیلا ہوا ریت کا طوفان ہے ۔"

41 سالہ النیادی، یو اے ای سے خلاء میں جانے والے دوسرے خلاباز، جبکہ پہلے اماراتی ہیں جنہوں نے امریکی سرزمین سے طویل خلائی مشن کے لیے اڑان بھری۔

مقبول خبریں اہم خبریں