عربی خطاطی کے عراقی عاشق عباس البغدادی کی زندگی کا بھی اختتام

عباس البغدادی نے اپنے قلم سے اہم ترین عراقی دستاویزات اور صدام حسین کے خون سے قرآن کریم لکھا تھا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

عراقی خطاط عباس شاکر جودی البغدادی منگل کو طویل علالت کے بعد جہان فانی سے رخصت ہوگئے۔ ان کی وفات سے عربی خطاطی کے علوم اور فنون اور خطاطی کے شاہکار فن پاروں کے ایک دور کا بھی خاتمہ ہوگیا۔

عباس البغدادی نے اپنے قلم سے اہم عراقی کرنسیوں اور دستاویزات کو لکھا تھا۔ ان دستاویز میں عراقی قومیت کا سرٹیفکیٹ، شہری حیثیت کی شناخت، اور پاسپورٹ بھی شامل تھے۔ وہ 1988 سے 2003 تک کیلیگرافرز ایسوسی ایشن کے سربراہ بھی رہے۔ عراق پر قبضے کے بعد وہ اردن اور پھر امریکہ چلے گئے۔ برسوں بعد سعودی عرب میں آباد ہونے کے لیے واپس آئے جہاں ان کا انتقال ہو گیا۔

سوشل میڈیا پر ان کی شاگردوں کی بڑی تعداد اور دیگر افراد نے ان کی وفات پر اظہار افسوس کیا۔ بڑی تعداد میں شاگردوں نے ان سے عربی خط کھینچنا سیکھا تھا۔

مرحوم کے سب سے مشہور طالب علم خطاط حسن البکولی نے اپنے فیس بک پیج پر عباس البغدادی کو خراج تحسین پیش کیا اور انہیں "عرب اور اسلامی دنیا اور عربی خطاطی کی تاریخ کا سب سے بڑا اور ماہر خطاط" قرار دیا۔ انہوں نے کہا کہ عظیم استاد کا انتقال ایک بڑا نقصان ہے۔

خطاط قاسم حیدر نے کہا عباس البغدادی عربی خط کی تقدیس کرتے تھے۔ وہ خط س کی گہرائیوں کو جاننے کے لیے اس کا مطالعہ کرتے تھے۔ وہ اسے ان چند لوگوں میں سے ایک تھے جو روحانی انجینئرنگ کے اسرار میں مصروف تھے۔

عراق اور بیرون ملک کے بہت سے ہم عصر خطاطوں کو عباس نے سکھایا تھا۔ انہوں نے امریکہ میں بھی لوگوں کو خطاطی سکھائی تھی۔ انہوں نے خطاطی کے کاموں اور یادگاروں کی ایک بڑی تعداد چھوڑی ہے۔ انہوں نے ثلث، نسخ اوردیگر خطوط میں بھی عبارت لکھی ہے۔

خطاطی اور جمالیاتی مخطوطات کے پروفیسرادھم محمد حنش نے کہا عباس البغدادی ایک منفرد اور حیرت انگیز جمالیاتی انداز میں نسخ اور ثلث خطوط کے حروف رقم کرنے میں ممتاز تھے۔

خطاط عباس البغدادی نے اپنے ایک ٹیلی ویژن انٹرویو میں بتایا تھا کہ صدر صدام حسین نے ایک مرتبہ انہیں ہنگامی طور پر بلایا اور کہا تھا کہ میں ان کے خون کو سیاہی کے طور پر استعمال کرتے ہوئے ان کے لیے پورا قرآن لکھ کر دوں۔ انہوں نے کہا کہ میری بینائی تقریبا ختم ہوگئی تھی اور اس کے باعث کام میں مشکلات تھی۔ اس لیے مجھے ایک کیمیائی مادے کے ساتھ خون ملانا پڑا تھا تاکہ یہ کام کرنے میں خط لکھنے میں آسانی ہو۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں