’ویوز کے چکر میں‘جان بوجھ کر طیارہ تباہ کرنے والے یوٹیوبر کا انجام کیا ہوا؟

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size

امریکہ میں یو ٹیوب کے لئے لوازمہ تیار کرنے والے ایک فری لانسر کے وہم وگمان میں بھی نہ تھا کہ اپنے لائکس کے ذریعے ڈالر کمانے کے لالچ میں اپنا جہاز خود ہی تباہ کرنے کی حماقت اسے کتنی مہنگی پڑ سکتی ہے؟

فالوورز اور ویوز کے چکر میں اپنے طیارے کو تباہ کرنے والے ایک امریکی یوٹیوبر کو 20 سال تک قید ہو سکتی ہے۔

خبر رساں ادارے اے ایف پی کے مطابق نومبر 2021 میں 29 برس کے یوٹیوبر پائلٹ ٹریور جیکب نے زیادہ ویوز کے حصول کے لیے اپنے طیارے کو کیلیفورنیا میں گرا کر تباہ کر دیا تھا۔

یہ ویڈیو تقریباً 30 لاکھ لوگوں نے دیکھی تھی جس کا موضوع تھا کہ ’میں نے اپنے طیارے کو تباہ کر دیا۔‘

مشکل صورت حال کی ایکٹنگ

ڈرامائی فوٹیج میں دیکھا جا سکتا ہے کہ جیکب سنگل ایجن طیارے سے چلانگ لگاتے ہوئے سیلفی سٹک ہاتھ میں لیے لاس پیڈریس نیشنل فارسٹ میں پیراشوٹ کے ذریعے اتر رہے ہیں۔

جیکب نے طیارے کے ملبے تک پہنچنے کے لیے اپنی ویڈیو خود بنائی جہاں وہ یہ دیکھ کر پریشان دکھائی دیتے ہیں کہ جو پانی اس نے اپنے ساتھ رکھا تھا وہ اب موجود نہیں ہے۔

اس دوران وہ باقاعدہ اپڈیٹس بھی دیتے رہیں کہ وہ کتنے پیاسے ہیں اور ان کو سمجھ نہیں آ رہی کہ وہ کیا کریں۔

آخر کار وہ ایک ندی سے پانی پینے کے لیے رک جاتے ہیں اور کچھ لمحوں بعد ان کو ایک گاڑی نظر آتی ہے اور وہ خود کو محفوظ محسوس کر لیتے ہیں۔

ہوابازی انتظامیہ کی تفتیش

امریکی فیڈرل ایوی ایشی ایڈمنسٹریشن نے جیکب پر یوٹیوب ویوز کے لیے جان بوجھ کر اپنے طیارے کو تباہ کرنے کا الزام لگایا تھا جس کا بعد میں جیکب نے خود اعتراف بھی کیا۔

حادثے کے چند ہفتوں بعد نیشل ٹرانسپورٹیشن سیفٹی بورڈ اور فیڈرل ایوی ایشن ایڈمنسٹریشن کے تفتیش کاروں نے حادثے کی تحقیقات کا آغاز کیا تھا اور جیکب کو ملبہ محفوظ رکھنے کا حکم دیا تھا۔

یوٹیوبر نے حکام کو بتایا تھا کہ کہ وہ نہیں جانتا کہ طیارہ کیسے گرا لیکن لاس اینجلس میں تصفیے کے لیے دائر ایک درخواست کے مطابق، ڈرامے کے دو ہفتے بعد یوٹیوبر اور ان کے ایک دوست نے ملبے کو ہیلی کاپٹر کے ذریعے جنگل سے باہر نکالا اور طیارے میں لگے کیمروں سے ڈیٹا حاصل کیا۔

اگلے چند دنوں میں یوٹیوبر نے طیارے کو ٹکڑوں میں کاٹ دیا تھا اور لامپوک سٹی ایئرپورٹ کے اردگرد کے کوڑے دانوں میں ملبہ پھینک دیا تھا۔

ایف اے اے نے اپریل 2022 میں یوٹیوبر پائلٹ کا لائسنس منسوخ کر دیا تھا۔

تصفیے کے دائر درخواست کے مطابق جیکب نے اعتراف کیا کہ جب اس نے ملبے کو ٹھکانے لگایا تو اس نے وفاقی حکام کی تحقیقات کی راہ میں رکاوٹ ڈالنے کا ارادہ کیا تھا اور پیسے کمانے کے لیے ویڈیو بنائی تھی۔

مقبول خبریں اہم خبریں