مہنگی سیلفی ؛انسپکٹرکا ڈیم میں گرا سام سنگ فون ڈھونڈنے کے لیے 21لاکھ لیٹرپانی کا ضیاع

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

بھارت میں ایک سرکاری اہلکار نے سیلفی لیتے ہوئے پانی میں گرنے والا اپنا قیمتی موبائل فون نکالنےکے لیے پورے ڈیم کوخشک کرنے کا حکم دےدیالیکن ڈیم کے کنارے سیلفی کے اس نرالے شوق کی اس بھارتی اہلکار کو بھاری قیمت چکانا پڑی ہے اور اس کو اپنے اختیارات کے ناجائز استعمال پرمعطل کردیا گیا ہے۔

بھارت کی وسطی ریاست چھتیس گڑھ میں تعینات انسپکٹرخوراک راجیش وشواس نے ایک ہفتہ قبل سیلفی لیتے ہوئے اپنا فون کھیرکٹا ڈیم میں گرادیا تھا۔پہلے تو غوطہ خوروں نے کھیرکٹا ڈیم میں گرے موبائل فون کوڈھونڈ نکالنے کی کوشش کی لیکن جب وہ اس میں ناکام رہے تو انسپکٹر نے 21 مئی کو پورے ڈیم کو خشک کرنے کا حکم دےدیا۔ اس مقصد کے لیے وشواس نے ایک موٹرپمپ خریدکیا، اور تین دنوں میں، ڈیم سے 21 لاکھ لیٹر سے زیادہ پانی نکال دیا گیا۔

سام سنگ برانڈ کے اس فون کی قیمت مبیّنہ طور پر 1200 ڈالربتائی گئی ہے، یہ کام کرنے کے قابل نہیں رہاتھا اور پانی میں گرکر تباہ ہو گیا تھا۔اس موبائل فون کی تلاش کے لیے ضائع کیے گئے پانی سے بعض رپورٹوں کے مطابق 1500 ایکڑ تک رقبہ سیراب کیا جاسکتا تھا۔

فوڈ انسپکٹر وشواس نے دعویٰ کیا کہ فون میں خفیہ سرکاری معلومات تھیں اور انھیں ایک نامعلوم عہدہ دار کی جانب سے چھتیس گڑھ میں واقع ڈیم کی نکاسی کی زبانی تصدیق ملی تھی۔

32 سالہ انسپکٹر نے اپنی حرکت کا دفاع کرتے ہوئے کہا کہ پانی کو قریبی نہر میں نکالا گیا ہے جس سے آس پاس کے کسانوں کو فائدہ ہوگا۔

ایک شکایت کی بنیاد پر ڈیم خشک ہونے کے کئی دن بعد موقع پر پہنچنے والے بھارتی حکام نے انسپکٹر کے تمام دعووں کو مسترد کردیا ہے۔انھوں نے انسپکٹر کو اپنے اختیارات کے غلط استعمال پر فوری طور پرمعطل کردیا تھا اور کئی مقامی شخصیات کی جانب سے بھی اس پر ردعمل سامنے آیا تھا۔

کھیرکٹا ڈیم ۔
کھیرکٹا ڈیم ۔

ڈیم سے پانی کے ضیاع کا واقعہ ایسے وقت میں سامنے آیا ہے جب ریاست میں شدید گرمی پڑرہی ہے اوراس کی وجہ سے وقفے وقفے سے پانی کی ترسیل کی جارہی ہے۔

ریاست کے سابق وزیراعلیٰ رامن سنگھ نے سوشل میڈیا پر ایک پوسٹ میں کہا ہے’’آج شدید گرمی میں لوگ ٹینکروں پر گذارہ کررہے ہیں، پینے کے پانی کا بھی کوئی انتظام نہیں۔ دوسری طرف سرکاری افسر اپنے موبائل فون کے لیے قریباً 21 لاکھ لیٹر پانی ضائع کررہے ہیں حالانکہ اس سے ڈیڑھ ہزار ایکڑ زمین کو سیراب کیا جاسکتا تھا‘‘۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں