سعودی عرب میں چھٹا قدیم ترین عربی نوشتہ ’’ الحقون‘‘ دریافت کرلیا گیا

دریافت جنوبی عرب میں ابتدائی عربی تحریروں کے ریکارڈ میں ایک سائنسی اضافہ ہے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

سعودی عرب میں ہیریٹیج اتھارٹی نے اپنے سروے کے کام کے حصے کے طور پر نجران کے ثقافتی علاقے ’حمی‘ میں جبل الحقون میں واقع ایک ابتدائی عربی نوشتہ دریافت کرلیا اور اس کو فلما کر محفوظ کرلیا ہے۔
ہیریٹیج اتھارٹی نے وضاحت کی کہ یہ کعب بن عمرو بن عبد منات کا یادگاری نوشتہ ہے جسے انہوں نے نباطین کیلنڈر کے مطابق اس کے نفاذ کی تاریخ کے ساتھ ریکارڈ کیا اور مہر زد کیا ہے۔ اس نوشتہ میں عددی اقدار کے ساتھ نبطی علامتوں کے طریقہ کار کو استعمال کیا گیا ہے۔
اس نوشتہ کی تاریخ بتاتی ہے کہ نوشتہ لکھنے والا ایک تاجر اور سوداگر تھا جو اس سڑک سے گزرا تھا اور جزیرہ نما عرب کے شمال مغرب میں اپنے گھر کی طرف جا رہا تھا۔ تاریخ کے اصول بتاتے ہیں کہ بصری کیلنڈر کے مطابق یہ سال 380 ہے جو 105 سال اضافے کے ساتھ 485 عیسوی کا سال بنتا ہے۔
یہ دریافت شدہ نوشتہ تاریخ کے لحاظ سے بعض نوشتہ جات سے قدیم نہیں ہے۔ اس سے بھی قدیم نوشتہ جات میں سے تین العلا گورنری میں موجود ہیں۔ ایک رقوش نوشتہ ہے جو 267 عیسوی کا ہے۔ دوسرا قزح المابیات کا نوشتہ ہے جو 280 عیسوی کا ہے۔ ایک ذی آل بن ذریق کا نوشتہ ہے جو 312 عیسوی سے تعلق رکھتا ہے۔ اسی طرح نجران کا ایک ثوبن نوشتہ ہے جس کا تعلق 469 عیسوی سے جڑتا ہے۔ اس دریافت کو جزیرہ نما عرب کے جنوب میں ابتدائی عربی تحریروں کے ریکارڈ میں ایک سائنسی اضافہ سمجھا جا رہا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں