تین سال ملٹی وٹامنز لینے والے افراد کی یادداشت میں بہتری دیکھی گئی: حیران کن تحقیق

ڈاکٹروں کا مشورہ ہے ملٹی وٹامنز صحت مند طرز زندگی کا متبادل نہیں بلکہ ایک تکمیلی جزو ہو سکتے ہیں

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

اچھی صحت کو فروغ دینے کے لیے ملٹی وٹامن لینے کی افادیت کے بارے میں بعض اوقات بہت زیادہ تنازعات سامنے آتے ہیں۔ لہذا متعدد امریکی یونیورسٹیوں کے محققین اس بات کا جائزہ لینا چاہتے تھے کہ روزانہ لیے جانے والے ملٹی وٹامنز کس طرح عمر اور یادداشت کو متاثر کرتے ہیں۔ محققین کی ٹیم نے تقریباً 35 سو معمر افراد کو تحقیق کے لیے منتخب کیا۔ شرکاء کے ایک گروپ کو فرضی دوائی دی گئی اور دوسرے گروپ نے تین سال تک ملٹی وٹامن گولیاں لیں۔ اس دوران انہوں نے یاداشت کا اندازہ لگانے کے لیے آن لائن ٹیسٹ کرائے۔

تین سال کے بعد اس تحقیق کو غیر منافع بخش میڈیا تنظیم این پی آر نے شائع کیا۔

پہلے سال کے اختتام پر دیکھا گیا کہ جن لوگوں نے ملٹی وٹامن لیا ان میں الفاظ کو یاد رکھنے کی صلاحیت میں بہتری آئی۔ شرکا کو الفاظ کی فہرست دی گئی - کچھ متعلقہ اور کچھ غیر متعلق - اور زیادہ سے زیادہ الفاظ یاد رکھنے کو کہا گیا۔ یہ سیکھنے کی فہرست کا ٹیسٹ تھا جس سے کسی شخص کی معلومات کو ذخیرہ کرنے اور بازیافت کرنے کی صلاحیت کا اندازہ لگایا جاتا ہے۔

نتائج میں بتایا گیا کہ جن لوگوں نے ملٹی وٹامن لیا وہ دوسرے گروپ کے مقابلے میں تقریباً ایک چوتھائی اضافی الفاظ یاد رکھ سکتے تھے۔

نارتھ ویسٹرن یونیورسٹی کالج آف میڈیسن کے جنرل انٹرنل میڈیسن کے شعبہ کے سربراہ ڈاکٹر جیفری لنڈر کہتے ہیں کہ یہ ایک "دلچسپ" دریافت ہے۔

بریگھم اینڈ ویمنز ہسپتال میں انسدادی ادویات کی سربراہ ڈاکٹر جوآن مینسن کا کہنا ہے کہ یہ مطالعہ ملٹی وٹامن کے فوائد کو ظاہر کرنے والا پہلا نہیں ہے۔ ایک مطالعہ کے نتائج کا حوالہ دیتے ہوئے انہوں نے کہا کہ اس سے قبل بھی یومیہ ملٹی وٹامن لینے سے الزائمر اور ڈیمنشیا کے مریضوں میں بہتری دیکھی گئی ہے۔

ڈاکٹر مینسن کا کہنا ہے کہ یہ حیرت کی بات ہے کہ اس تحقیق میں عمر سے متعلق یادداشت میں کمی کو روکنے کا واضح اشارہ ملا ہے۔ انسانی جسم اور دماغ کو زیادہ سے زیادہ صحت اور کارکردگی کے لیے بہت سے غذائی اجزاء تک رسائی کی ضرورت ہوتی ہے۔

ڈاکٹر مینسن کا مزید کہنا ہے کہ اس بات کو اجاگر کرنا ضروری ہے کہ ملٹی وٹامن کبھی بھی صحت مند غذا کا متبادل نہیں ہو گا۔ اس کی وجہ یہ ہے کہ غذائی اجزا سپلیمنٹس کے مقابلے میں کھانے کے ذریعے بہتر طور پر جذب ہوتے ہیں۔ تاہم بوڑھے افراد کے ملٹی وٹامنز والی حکمت عملی فائدہ مند ثابت ہوسکتی ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں