اقوام متحدہ کے 58 کیمپوں میں 60 لاکھ سے زائد فلسطینی پناہ گزین

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

فلسطین کی ایک شماریاتی رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ اقوام متحدہ میں رجسٹرڈ 6.4 ملین سے زائد فلسطینی پناہ گزین اب بھی کیمپوں میں زندگی گزار رہے ہیں۔

عالمی یوم مہاجرین کے موقع پر فلسطینی مرکزی ادارہ شماریات نے جمعرات کو جاری کردہ اپنی ایک رپورٹ میں کہا ہے کہ 28.4 فیصد فلسطینی پناہ گزین اقوام متحدہ کی ریلیف اینڈ ورکس ایجنسی برائے فلسطینی پناہ گزینوں (انروا) کے 58 سرکاری کیمپوں میں مقیم ہیں۔

رپورٹ کے مطابق فلسطینی پناہ گزینوں کے اردن میں 10 کیمپ، شام میں 9 کیمپ، لبنان میں 12 کیمپ، مغربی کنارے میں 19 کیمپ اور غزہ کی پٹی میں 8 کیمپ ہیں۔

رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ "1948 میں 800,000 سے زیادہ فلسطینی بے گھر ہوئے، اور 200,000 سے زیادہ فلسطینی، جن میں سے اکثریت نے اردن میں پناہ لی ، جون 1967 کی جنگ کے بعد بے گھر ہو گئے تھے۔"

رپورٹ کے مطابق 2021 کے آخر میں دنیا میں فلسطینیوں کی کل تعداد تقریباً 14 ملین تھی، جس سے ظاہر ہوتا ہے کہ 1948 کے نکبہ کے واقعات کے بعد سے فلسطینیوں کی تعداد میں تقریباً 10 گنا اضافہ ہوا ہے، جن میں سے تقریباً نصف یعنی تقریبا (7 ملین) تاریخی فلسطین میں آباد ہیں۔

آبادی کے اندازوں سے ظاہر ہوتا ہے کہ 2021 کے آخر تک مغربی کنارے (بشمول یروشلم) میں فلسطینیوں کی آبادی 3.2 ملین اور غزہ کی پٹی میں تقریباً 2.1 ملین افراد تک پہنچ گئی۔

یروشلم شہر میں 2021 کے آخر میں فلسطینی آبادی تقریباً 477 ہزار تک پہنچ گئی، جن میں سے تقریباً 65 فیصد (تقریباً 308 ہزار لوگ) یروشلم کے ان علاقوں میں مقیم ہیں جنہیں اسرائیل نے 1967 میں مغربی کنارے پر قبضے کے فورا بعد طاقت کے ذریعے ضم کر لیا تھا۔

ان اعداد و شمار کی بنیاد پر، فلسطینی "تاریخی فلسطین" کے علاقے میں مقیم آبادی کا 49.9 فیصد ہیں، جب کہ یہودی کل آبادی کا 50.1 فیصد ہیں جو "تاریخی فلسطین" کے کل رقبے کے 85 فیصد سے زیادہ کا استحصال کرتے ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں