مکہ مکرمہ: مسجد حرام کی لائبریری میں 7 نایاب مخطوطات کی نمائش

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

صدارت عامہ برائے امور حرمین شریفین نے مسجد حرام کی خواتین لائبریری میں 7 نایاب مخطوطے نمائش کے لیے رکھے ہیں۔ ان میں سب سے اہم مصحف عثمانی ہے جو کہ خلیفہ عثمان بن عفان کے دور میں لکھا گیا تھا۔

نمائش کے لیے ایک منفرد لوح پیش کی جا رہی ہے جس پر معروف خطاط محمد ابراہیم کی لکھی گئی قرآنی آیات شامل ہیں، ہاتھ سے لکھا گیا موطا کا دنیا میں موجود واحد نسخہ، 60 سال پہلے کے پرانے اخبارات کا ایک مجموعہ، "ذروة الوفا بأخبار دار المصطفى" اور "بلوغ القرى في ذيل إتحاف الورى بأخبار أم القرى" بھی نمائش کا حصہ ہیں۔

اس بارے میں بات کرتے ہوئے جنرل ڈیپارٹمنٹ برائے ثقافتی امور وخواتین کی ڈائریکٹر امیمہ السدیس نے کہا کی کہ نمائش کا افتتاح ایک تاریخی اور ثقافتی پلیٹ فارم کے قیام کے لیے عمل میں آیا ہے جو معاشرے کو تاریخی اور ثقافتی طور لحاظ سے اپنے علمی تصورات کو وسعت دینے کے لیے کام کرتا ہے۔

حرم مکی میں لگائی گئی نمائش میں رکھے نادر مخطوطات
حرم مکی میں لگائی گئی نمائش میں رکھے نادر مخطوطات

انہوں نے کہا کہ مکہ مکرمہ میں حرم کی خواتین لائبریری دراصل ایک ثقافتی جھروکہ ہے جس میں اللہ کے مہمانوں کے روحانی اور ٹقافتی تجربے کی تقویت کے لیے اہم ثقافتی نمونوں کی نمائش ہوتی ہے۔ اس مکتبے میں (12) ضمنی لائبریریاں ہیں۔

انہوں نے بتایا کہ اس نمائش کے لیے لائبریری کے ارتقائی مراحل کو دستاویزی شکل بھی دی گئی ہے۔

اس دوران انہوں نے بعض نادر مخطوطے، قرآن پاک کے نایاب نسخے، پرانے اخبارات، مسجد حرام اور مکہ مکرمہ کی پرانی اور جدید تصاویر اور بعض مخطوطات کی تصاویر بھی دکھائیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں