سعودی عرب نے تفریحی صنعت کے فروغ کے لیے جون میں 378 لائسنس جاری کیے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

سعودی عرب تیل پر انحصار کرنے والی اپنی معیشت کو متنوع بنانے کی غرض سے بڑھتی ہوئی تفریحی صنعت کو مزید فروغ دے رہا ہے۔ اس منصوبے کے تحت گذشتہ ماہ 378 تفریحی لائسنس جاری کیے گئے۔

ان لائسنسوں کے اجراء کے بعد، ریاستی تفریحی پورٹل کے ذریعے جاری کیے گئے لائسنسوں کی تعداد 12,600 سے زیادہ ہو گئی ہے۔

سعودی اسٹیٹ جنرل انٹرٹینمنٹ اتھارٹی (جی ای اے) کی جانب سے دیے گئے اعداد وشمار کے مطابق، جون میں جاری کردہ لائسنسوں میں تفریحی تقریبات کے انعقاد کے لیے 112 اجازت نامے، تفریحی شوز کے لیے 103 اجازت نامے، تفریحی سہولیات کو چلانے کے لیے 22 مزید اجازت نامے، فنکارانہ صلاحیتوں کی نشوونما کے انتظام کے لیے 9 اجازت نامے، اور چار ایکریڈیشن سرٹیفکیٹ تفریحی ٹکٹوں کی فروخت کے لیے شامل تھے۔

دیگر لائسنسوں میں ، جیسا کہ جی ای اے نے ٹوئٹر پر کہا کہ، ریستوراں اور کیفے میں لائیو شوز کے لیے 104 اجازت نامے، ہجوم کے انتظام کے لیے 20 ایکریڈیشن سرٹیفکیٹ، اور تفریحی مراکز کے لیے چار لائسنس شامل ہیں۔

سعودی انٹرٹینمنٹ اتھارٹی نے 2016 میں اپنے قیام کے بعد سے مقامی اور غیر ملکی ناظرین کو متوجہ کرنے کے لیے سعودی عرب کے مختلف علاقوں میں تقریبات کا سلسلہ شروع کیا اور اس سلسلے میں نجی شعبے کے ساتھ متعدد منصوبوں پر کام کیا ہے۔

اتھارٹی کے سربراہ ترکی الشیخ نے گذشتہ مارچ میں کہا تھا کہ 2019 سے سعودی عرب میں تقریباً 120 ملین لوگوں نے تفریحی پروگراموں میں شرکت کی ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ، عالمی وبا کووڈ ۔ 19 کی وجہ سے درپیش چیلنجوں کے باوجود یہ تعداد حاصل کی گئی ہے۔

حالیہ برسوں میں، سعودی عرب نے اپنی تفریحی صنعت کو فروغ دینے کی کوشش میں متعدد بڑے فنکاروں کے کنسرٹس، سنیما، تھیٹر کے شو اور مقابلوں کا سلسلے منعقد کیے ہیں۔

موسم گرما کے تفریحی پروگراموں کا ایک سلسلہ مئی میں شروع ہوا جس میں 17 سعودی شہروں میں کنسرٹ اور ڈرامے پیش کیے گئے۔

اپریل 2018 میں، سعودی عرب میں تقریباً چار دہائیوں میں پہلی بار سینما گھر کھولے گئے۔

تفریحی صنعت کے فروغ کے لیے یہ اقدامات دراصل زیادہ سے زیادہ غیرملکی سیاحوں کو راغب کرنے کا باعث بنیں گے۔ مملکت کا مقصد 2023 میں 25 ملین غیر ملکی سیاحوں کو متوجہ کرنا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں