’’سعودی عرب کی ڈیجیٹل ترقی پاکستانی آئی ٹی فرموں کے لیے گیٹ وے ہے‘‘

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

سعودی عرب میں مقیم پاکستانی جواد خان، جنہیں گذشتہ ماہ ریاض میں سب سے بہتر سی ای او کے ’’بی ٹی ایکس‘‘ ایوارڈ سے نوازا گیا تھا، نے کہا ہے کہ سعودی عرب کی ڈیجیٹل ترقی پاکستانی آئی ٹی فرموں کے لیے گیٹ وے ہے۔

جواد خان کا کہ سعودی عرب کی تیز رفتار ڈیجیٹل تبدیلی نے تجربہ کار پاکستانی آئی ٹی فرموں کے لیے اپنی مارکیٹ کو بڑھانے کے وسیع مواقع پیدا کر دئیے ہیں۔

سعودی عرب میں ورلڈ وائیڈ مارکیٹنگ کمیونیکیشن فرم ’’ سائنوسور‘‘ (Cynosure) کے چیف ایگزیکٹو آفیسر جواد خان کو 14 جون 2023 کو ریاض میں گلوبل میڈیا گروپ کے زیر اہتمام ایک تقریب کے دوران باوقار BTX ٹاپ CEO ایوارڈ سے نوازا گیا۔ ان کا شمار ان ایگزیکٹوز میں ہوتا ہے جنہوں نے سعودی عرب کی ترقی میں اہم کردار ادا کیا ہے۔

چیف ایگزیکٹو آفیسر جواد خان کو 14  جون 2023 کو ریاض میں گلوبل میڈیا گروپ کے زیر اہتمام ایک تقریب کے دوران باوقار BTX ٹاپ CEO ایوارڈ سے نوازا گیا: فوٹو بہ شکریہ safarnews.net
چیف ایگزیکٹو آفیسر جواد خان کو 14 جون 2023 کو ریاض میں گلوبل میڈیا گروپ کے زیر اہتمام ایک تقریب کے دوران باوقار BTX ٹاپ CEO ایوارڈ سے نوازا گیا: فوٹو بہ شکریہ safarnews.net

اس مقابلہ میں 24 کمپنیوں کے سی ای اوز اور ایگزیکٹوز نے شرکت کی۔ اس تقریب نے سعودی عرب کو تیزی سے بڑھتی ہوئی معیشت کے ساتھ ایک امید افزا مارکیٹ کے طور پر اجاگر کیا۔

جواد خان نے بذریعہ ٹیلی فون عرب نیوز سے بات کرتے ہوئے کہا ’’سعودی مارکیٹ خود کو ڈیجیٹل دور میں اتنی تیزی سے تبدیل کر رہی ہے اور تجربہ کار پاکستانی آئی ٹی کمپنیاں سعودی عرب میں اپنی مارکیٹ کو بڑھا سکتی ہیں اور پاکستانی حکومت بھی سعودی حکومت سے سیکھ سکتی ہے۔‘‘

انہوں نے کہا کہ جغرافیائی طور پر دونوں برادر ممالک ایک دوسرے کے بہت قریب ہیں اور آئی ٹی، مصنوعی ذہانت، انٹرنیٹ آف تھنگز (IoT) اور سیاحت میں آپس میں تعاون کر سکتے ہیں۔خاص طور پر قابل تجدید توانائی کے شعبے میں میں دونوں ملکوں میں تعاون کے بڑے مواقع ہیں۔

جواد خان نے کہا کہ سعودی معیشت ترقی کر رہی ہے کیونکہ مملکت نے 2022 میں 8.7 فیصد کی نمایاں ترقی حاصل کی۔ سعودی عرب کی ترقی کی یہ شرح گروپ 20 ممالک میں سب سے زیادہ ہے۔

انہوں نے بتایا سعودی عرب میں چھوٹے اور درمیانے درجے کے کاروباری اداروں کی تعداد گزشتہ سال 8 لاکھ 92 ہزار 63 تک پہنچ گئی ہے جو جو 2021 کی چوتھی سہ ماہی کے مقابلے میں 25.6 فیصد زیادہ ہے۔

جواد نے کہا میں یہاں سعودی عرب میں پیدا ہوا ہوں اور مجھے ہمیشہ لگتا ہے کہ یہ میرا گھر ہے۔ ہم سعودی عرب کی اقتصادی ترقی کا حصہ بننے پر اس کے شکر گزار ہیں۔ سعودی عرب پاکستانی افرادی قوت کی پہل کرنے میں آمادگی کی وجہ سے ان کا بہت احترام کرتی ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں