سعودی مصور نے درجہ حرارت کے مطابق تبدیل ہوجانے والی پینٹنگز بنا لیں

حیرت انگیز تکینک استعمال کی گئی، آئل پینٹنگ 18 اور 30 سنٹی گریڈ پر شکل تبدیل کر لیتی ہے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

فن اور تخلیقی صلاحیتوں کی زبان میں کوئی بھی چیز ناممکن نہیں ۔ تجربات و نظریات اور فنون کی ذہانت میں تحقیق کے سفر کے دوران سعودی مصور صباح الظفیری نے کئی تجربات کے بعد کامیابی حاصل کرلی۔ صباح نے ایسی آئل پینٹنگ بنانا شروع کردی ہے جو اس جگہ کے درجہ حرارت کے مطابق حرکت کرتی ہے۔ اگر اس مقام کا درجہ حرارت 18 سینٹی گریڈ تک گر جائے تو تصویر بدل جاتی ہے۔ اسی طرح گرمی کا پارہ 30 ڈگری تک بلند ہوجائے تو یہ مختلف شکل اختیار کرلیتی ہے۔

یہ خطے میں اپنی نوعیت کی پہلی پینٹنگ ہے جس میں طبیعیات کے قوانین پلاسٹک کی تخلیقی صلاحیتوں کے ساتھ جڑے گئے ہیں۔

یہ ایک عظیم رہنما کی محبت کا اظہار کرتے ہیں جس نے نوجوانوں کی حوصلہ افزائی اور حمایت کی اور انہیں اپنی تخلیقی صلاحیتوں کو دکھانے کے مواقع فراہم کیے ہیں۔

صباح الظفیری نے ’’العربیہ ڈاٹ نیٹ‘‘ کو ایک انٹرویو میں کہا کہ یہ خیال برسوں سے میرے ذہن میں تھا اور ہر تجربہ ناکامی سے دوچار ہوتا تھا۔ یہاں تک کہ آخر کار یہ تجربہ کامیاب ہو گیا اور پھر اس نے بڑی شہرت حاصل کرلی۔

انہوں نے بتایا یہ تجربہ مختصرا آئل کے رنگوں کے ساتھ کیمیکلز کو متوازن کرنے کی بنا پر ہے۔ یہ وہ رنگ ہیں جو کبھی سردی سے متاثر ہوتے ہیں اور کبھی گرمی سے۔ پھر تیل کی تہہ کو متاثر کرنے کے طریقے کو اختیار کیا جاتا ہے۔ اس طرح تصویر دوسرے رنگ سے بدل جاتی ہے۔

اپنی پینٹنگز کے فوائد کے بارے میں انہوں نے کہا کہ میں کئی مناظر کو جمع کرتا ہوں اور انہیں ایک پینٹنگ میں بناتا ہوں ان مناظر کا مقصد خاص معنی لیے ہوتا ہے۔ اپنی پینٹنگز میں میں روشنی اور سائے کی مبالغہ آرائی پر بھروسہ کرتا ہوں۔

ڈرائنگ میں اپنی پیشہ ورانہ مہارت کے آغاز کی کہانی کے بارے میں انہوں نے کہا کہ میری شروعات کسی بھی پلاسٹک آرٹسٹ کی بچپن کی طرح ہی تھی۔ میں ڈرائنگ سے محبت کرتا تھا اور مشکل چیزوں کی ڈرائنگ میں دلچسپی رکھتا تھا۔ پھر آہستہ آہستہ میں اس سطح پر پہنچ گیا ہوں کہ میری پینٹنگز سب سے منفرد ہوتی ہیں۔ انہوں نے بتایا کہ میں نے 2016 سے 2022 تک اندرونی نمائشوں میں حصہ لیا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں