تکلیف دہ ویڈیو: جب ریسکیو رضاکار کو ملبے سے اپنے والد کی لاش نکالنا پڑی

ریسکیو کے عملے اور رضاکاروں کی بڑی تعداد سیلاب سے تباہ ہونے والی عمارتوں اور ساحل سمندر سے نعشیں میں مصروف ہیں

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

لیبیا میں ہولناک سیلاب سے تباہ ہونے والی عمارتوں کے ملبے تلے زندہ افراد کی تلاش کے لیے کی جانے والی ایسی دلدوز اور ظالمانہ کہانیاں سامنے آ رہی ہیں کہ جن کی تفصیل لفظوں میں بیان کرنا ممکن نہیں۔

درنہ میں امداد اور بحالی کی تلاش میں مصروف امدادی ٹیموں کے توسط سے ایسی ہی ایک دلدوز کہانی سامنے آئی جب ریسکیو ٹیمیں تباہ شدہ عمارت کے ملبے سے لاشیں نکالنے کے کام میں مصروف تھیں کہ عملے میں شامل رضاکار کو سیلاب میں اپنے لاپتا ہونے والے والد کی نعش ملبے کے ڈھیر میں دکھائی۔

سوشل میڈیا پر وائرل اس واقعے کے ویڈیو کلپ میں دیکھا جا سکتا ہے کہ امدادی کاموں میں مصروف رضاکار نے جب ملبے میں پھنسی لاش نکالنا چاہی تو وہ اپنے جذبات پر قابو نہ رکھا سکا کیونکہ جس نعش کو وہ باہر نکالنا چاہ رہا تھا وہ کسی اور کی نہیں بلکہ سیلاب میں لاپتا ہونے والے اس کے اپنے ہی والد کی تھی۔ ایسے میں تباہ حال عمارت کے سنسان ڈھانچے میں رضاکار کی سسکیوں اور چیخوں کی بازگشت نے پوری فضا غمگین بنا دی۔

دریں اثناء رضاکار اور ریسکیو کا عملہ سیلاب سے تباہ ہونے والی عمارتوں کے ملبے اور ساحل سمندر سے لاپتا افراد کی لاشوں کی تلاش کا کام جاری رکھے ہوئے ہیں، اس کام میں کئی ہفتے صرف ہونے کا اندیشہ ہے جبکہ لاپتا ہونے والوں کے رشتے داروں اپنے عزیزوں کی جلد از جلد تلاش کے منتظر ہیں۔

گذشتہ روز ایک نیوز کانفرنس سے خطاب میں لیبیا کے وزیر صحت عثمان عبدالجلیل نے بتایا کہ وزارت داخلہ کو چار ہزار لاپتا افراد سے متعلق شکایات موصول ہوئی ہیں۔ ان کے بقول ہم فی الحال لاپتا افراد کو مردہ قرار نہیں دے سکتے۔

وزیر صحت نے بتایا کہ جمع کئے جانے والے اعداد وشمار کے مطابق حالیہ سیلاب سے متاثرہ علاقوں میں 3338 اموات ہوئی ہیں، تاہم درنہ شہر میں جتنے بڑے پیمانے پر تباہی آئی ہے اس کی وجہ سے شہر میں لاپتا افراد کی حتمی تعداد کا تعین کرنا مشکل ہے۔

جانی نقصان کے علاوہ خوفناک سیلاب نے مشرق لیبیا، بالخصوص درنہ شہر میں تا حد نظر تباہی مچائی۔ مکمل کالونیاں صفحہ ہستی سے مٹ گئیں۔ سیلاب نے شہر کے بنیادی ڈھانچے کو ناقابل بیان حد تک نقصان پہنچایا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں